شام بانہوں میں لیے رات کی رانی آئی| کشور ناہید|

شام بانہوں میں لیے رات کی رانی آئی| کشور ناہید|
شام بانہوں میں لیے رات کی رانی آئی| کشور ناہید|

  

شام بانہوں میں لیے رات کی رانی آئی

اے محبت تجھے دینے کو سلامی آئی

تشنگی اتنی کہ دریا ہے مری آنکھوں میں

ناشناسا ترے ہونے کی گواہی آئی

 مجھ میں موجود ہے وہ اور نہیں ہے ظاہر

اس کی خواہش درودیوار بناتی آئی

زخم ایسا تھا ٹپکتا تھا لہو آنکھوں سے

دل بیاں کرنہ سکا ایسی تباہی آئی

پرسشِ حال کرے کون کسے ہے فرصت

کب مرے صحن میں نادیدہ خدائی آئی

 شاعرہ: کشور ناہید

 ( شعری مجموعہ:آباد خرابہ؛سالِ اشاعت،2016)

Shaam   Baahon   Men   Liay   Raat   Ki   Raani   Aai

Ay   Muhabbat   Tujhay   Dainay   Ko   Salaami   Aai

 Tashnagi   Itni   Keh   Darya   Hay   Miri   Aankhon  Men

Na   Shanaasa   Sa   Tiray   Honay   Ki   Gawaahi   Aai

 Mujh   Men   Mojood   Hay   Wo   Aor   Nahen    Hay    Zaahir

Uss   Ki   Khaahish   Dar-o-Dewaar   Banaati   Aai

 Zakhm   Aisa   Tha   Tapakta   Tha   Lahu   Aankhon  Say

Dil   Bayaan   Kar   Na   Saka   Aisi  Tabaahi   Aai

 Pursish-e-Haal   Karay   Kon   Kisay   Hay   Fursat

Kab   Miray   Sehn   Men   Na  Deeda   Khudaai   Aai

 Poetess: Kishwar   Naheed

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -