سپریم کورٹ: 25ویں آئینی ترمیم کےخلاف درخواست کے قابل سماعت ہونے پردلائل طلب 

سپریم کورٹ: 25ویں آئینی ترمیم کےخلاف درخواست کے قابل سماعت ہونے پردلائل طلب 
سپریم کورٹ: 25ویں آئینی ترمیم کےخلاف درخواست کے قابل سماعت ہونے پردلائل طلب 

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے 25ویں آئینی ترمیم کےخلاف درخواست کے قابل سماعت ہونے پردلائل طلب کرلئے اور درخواست گزار کو تیاری کیلئے مہلت دیدی۔

نجی ٹی وی جی این این کے مطابق سپریم کورٹ میں 25ویں آئینی ترمیم کے خلاف درخواست کی سماعت ہوئی،وفاق اور خیبرپختونخوا حکومت نے درخواست کے قابل سماعت ہونے پر اعتراض اٹھا دیا۔جسٹس عمر عطابندیال نے کہاکہ آرٹیکل17 کے مطابق سیاسی حقوق بنیادی حقوق میں آتے ہیں۔

وکیل درخواست گزار نے کہاکہ قبائلی علاقے اپنی مرضی سے پاکستان میں شامل ہوئے،قبائلی عوام کی قربانیوں سے انکار نہیں کیاجاسکتا، ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ آرٹیکل 246 کو ختم نہیں کیاگیا،247 کے تحت قبائلی علاقوں کو اس فہرست سے نکالاجاسکتا ہے،پارلیمنٹ بھی جرگہ ہی تصور ہوگی ،25 آئینی ترمیم پارلیمنٹ نے منظور کی ،ترمیم میں شہریوں کے تمام حقوق کوتحفظ دیا گیا۔

جسٹس یحییٰ خان آفریدی نے کہاکہ ترمیم پر پارلیمان میں بحث کا ریکارڈ عدالت میں جمع کروا دیں ،وکیل درخواست گزار نے کہاکہ عدالت درخواست پر وفاقی اور صوبائی حکومتوں سے جواب طلب کرے، جسٹس عمرعطابندیال نے کہاکہ پہلے آپ کیس کے قابل سماعت ہونے پر دلائل دیں ،عدالت نے درخواست گزار کوکیس کے قابل سماعت ہونے پر تیاری کیلئے مہلت دیدی۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -