جب بھی چُوم لیتا ہوں اِن حسین آنکھوں کو | کیفی اعظمی |

جب بھی چُوم لیتا ہوں اِن حسین آنکھوں کو | کیفی اعظمی |
جب بھی چُوم لیتا ہوں اِن حسین آنکھوں کو | کیفی اعظمی |

  

ایک بوسہ

جب بھی چُوم لیتا ہوں اِن حسین آنکھوں کو

سو چراغ اندھیرے میں   جِھلملانے لگتے ہیں

پھول کیا ، شگوفے کیا ، چاند کیا ، ستارے کیا

سب رقیب قدموں میں سر جھکانے لگتے ہیں

رقص کرنے لگتی ہیں   مورتیں اجنتا کی

مدتوں کے لب بستہ  غار گانے لگتے ہیں

پھول کِھلنے لگتے ہیں اُجڑے اُجڑے گلشن میں

پیاسی پیاسی دھرتی پہ  اَبر چھانے لگتے ہیں

لمحے بھر کو یہ دنیا   ظلم چھوڑ دیتی ہے

لمحے بھر کو سب پتھر  مسکرانے لمحے بھر کو

 شاعر: کیفی اعظمی 

 ( شعری مجموعہ:آوارہ سجدے؛سالِ اشاعت،1974)

Aik   Bosa

Jab   Bhi   Choom   Laita   Hun   Un   Haseen   Aankhon   Ko

So   Charaagh    Andhairay   Men   Jhilmalaanay     Lagtay   Hen

 Phool   Kaya   ,   Shagoofay   Kaya  ,   Chaand   Kaya    ,   Sitaaray   Kaya

Sab    Raqeeb    Qadmon   Men     Sar   Jhukaanay   Lagtay   Hen

 Raqs   Karnay    Lagti   Hen   Moorten   Ijtanaa   Ki

Mudaton   K   Lab   Basta   Ghaar   Gaanay   Lagtay   Hen  

 Phool   Khilnay   Lagtay   Hen   Ujarray    Ujraay   Gulshan   Men

Payaasi   Dhartti   Pe   Abr    Chhaanay   Lagtay   Hen 

 Lamhay   Bhar   Ko   Yeh   Dunya   Zulm   Chhorr    Daiti   Hay

Lamhay   Bhar   Ko   Sab   Pathhar   Muskuraanay   Lagtay   Hen

 Poet: Kaifi  Azmi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -