یہ جیت ہار تو  اس دور کا مقدر ہے| کیفی اعظمی |

یہ جیت ہار تو  اس دور کا مقدر ہے| کیفی اعظمی |
یہ جیت ہار تو  اس دور کا مقدر ہے| کیفی اعظمی |

  

دوپہر

یہ جیت ہار تو  اس دور کا مقدر ہے

یہ دور جو کہ پرانا نہیں  نیا بھی نہیں

یہ دور جو کہ سزا بھی نہیں جزا بھی نہیں

یہ دور جس کا بظاہر کوئی خدا بھی نہیں

تمھاری جیت اہم ہے  نہ میری ہار اہم

کہ ابتدا بھی نہیں ہے یہ انتہا بھی نہیں

شروع معرکۂ جاں  ابھی ہوا بھی نہیں

شروع ہو تو یہ ہنگامِ فیصلہ بھی نہیں

پیامِ زیرِ لب اب تک ہے صورِ اسرافیل

سنا کسی نے،کسی نے ابھی سنا بھی نہیں

کیا کسی نے،  کسی نے یقین کیا بھی نہیں

اُٹھا زمین سے کوئی، کوئی اٹھا بھی نہیں

یہ کارواں ہے تو انجامِ کارواں معلوم

کہ اجنبی بھی نہیں، کوئی آشنا بھی نہیں

کسی سے خوش بھی نہیں ہے، کوئی خفا بھی نہیں

کسی کا حال کوئی مڑ کے پوچھتا بھی نہیں

شاعر: کیفی اعظمی

 ( شعری مجموعہ:آوارہ سجدے؛سالِ اشاعت،1974)

Dopahar

Yeh   Haar   Jeet  To   Iss   Doar   Ka   Muqaddar   Hay

Yeh   Daor   Jo   Keh   Puraana    Nahen   Naya   Bhi    Nahen 

Yeh   Daor  Jo  Keh   Sazaa   Bhi    Nahen   Jazaa   Bhi    Nahen   

 Yeh   Daor   Jiss   Ka   Bazaahir   Koi   Khuda   Bhi    Nahen   

Tumhaari   Jeet   Ehm   Hay   Na   Meri   Haar   Ehm

 Keh   Ibtadaa   Bhi   Nahen   Hay   Yeh   Intahaa   Bhi    Nahen  

 Shiru   Maarka-e-Jaan   Abhi   Hua   Bhi    Nahen   

 Shiru   Ho   To   Yeh   Hangaam-e-Faisla   Bhi    Nahen   

Payaam-e-Zer-e-Lab  Hay   Ab   Tak   Soor-e-Israfeel

 Suna   Kisi   Nay   ,   Kisi   Nay   Abhi   Suna   Bhi    Nahen   

Kiya   Kisi   Nay  ,   Kisi   Nay   Yaqeen   Kiya   Bhi    Nahen   

Uthaa   Zameen   Say   Koi   ,   Koi   Utha   Bhi    Nahen

 Yeh   Kaarwaan   Hay   To   Anjaam-e-Kaarwaan   Maloom

Keh   Anjabi   Bhi   Nahen  ,   Koi   Aashna   Bhi    Nahen

Kisi   Say   Khush    Bhi   Nahen   Hay ،  Koi   Kahafa   Bhi    Nahen

Kis   Ka   Haal   Koi   Murr   K   Poochhta    Bhi    Nahen

 Poet: Kaifi   Azmi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -