سنا کرو مری جاں اِن سےاُن سے افسانے| کیفی اعظمی |

سنا کرو مری جاں اِن سےاُن سے افسانے| کیفی اعظمی |
سنا کرو مری جاں اِن سےاُن سے افسانے| کیفی اعظمی |

  

سنا کرو مری جاں اِن سےاُن سے افسانے

سب اجنبی ہیں یہاں کون کس کو پہچانے

مرے جنون پرستش سے تنگ آ گئے لوگ

سنا ہے بند کیے جا رہے ہیں بت خانے

جہاں سے پچھلے پہر کوئی تشنہ کام اٹھا

وہیں پہ توڑے ہیں یاروں نے آج پیمانے

بہار آئے تو میرا سلام کہہ دینا

مجھے تو آج طلب کر لیا ہے صحرا نے

ہوا ہے حکم کہ کیفیؔ کو سنگسار کرو

مسیح بیٹھے ہیں چھپ کے کہاں خدا جانے

شاعر : کیفی اعظمی

 ( شعری مجموعہ:آوارہ سجدے؛سالِ اشاعت،1974)

Sunaa   Karo   Miri   Jaan   In   Say   Un   Say   Afsaaanay

Sab   Ajnabi   Hen  Yahaan   Kon   Kiss   Ko   Pehchaanay

 Miray   Junoon-e-Parastish   Say   Tang   Aa   Gaey    Log

 Suna  Hay   Band   Kiay   Ja    Rahay    Hen   But   Khaanay

 Jahaan   Say   Pichhlay   Pahar   Koi  Tashna   Kaam   Utha

Waheen   Pe   Torray   Hen   Yaaron   Nay   Aaj   Paimaanay

 Bahaar   Aaey   To   Mera   Salaam   Kaih   Daina

Mujhay   To    Aaj    Talab    Kar    Liya    Hay    Sehra   Nay

 Hua   Hay   Hukm    Keh   KAIFI   Ko    Sangsaar   Karo

Maseeh   Baithay   Hen   Chhup   K    Kahaan   Khuda   Jaanay

Poet: Kaifi   Azmi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -