چار تنکے اُٹھا کے جنگل سے| گلزار |

چار تنکے اُٹھا کے جنگل سے| گلزار |
چار تنکے اُٹھا کے جنگل سے| گلزار |

  

خانہ بدوش

چار تنکے اُٹھا کے جنگل سے

ایک بالی اناج کی لے کر

چند قطرے بلکتے اشکوں کے

چند فاقے بجھے ہوئے لب پر

مٹھی بھر اپنی قبر کی مٹی

مٹھی بھر آرزوؤں کا گارا

ایک تعمیر کی، لیے حسرت

تیرا خانہ بدوش بے چارہ

شہر میں در بدر بھٹکتا ہے

تیرا کاندھا ملے تو سر ٹیکوں

شاعر:  گلزار

Khaana   Badosh

 

Chaar   Tinkay   Uthaa   K   Jangal   Say

Aik   Baali    Anaaj   Ki   Lay   Kar

Chand   Qatray   Bilaktay   Ashkon   K

 Chand   Faaqay   Bujhay   Huay    Lab   Par

Muthhi   Bhar   Apni   Qabr   Ki   Matti

Muthhi   Bhar   Aarzuon   Ka   Gaara

 Aik   Tameer   Ki   Liay   Hasrat

Tera   Khaana   Badosh   Bechaara

 Shehr   Men    Darbadar   Bhatakta   Hay

Tera   Kaandha   Milay   To   Sar   Taikun

 Poet: Gulzar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -