مری دہلیز پر بیٹھی ہوئی زانوں پہ سر رکھے| گلزار |

مری دہلیز پر بیٹھی ہوئی زانوں پہ سر رکھے| گلزار |

  

رات

مری دہلیز پر بیٹھی ہوئی زانوں پہ سر رکھے

یہ شب افسوس کرنے آئی ہے کہ میرے گھرپہ

آج ہی جو مرگیا ہے دن

وہ دن ہمزاد تھا اس کا !

وہ آئی ہے کہ میرے گھر میں اس کو دفن کرکے

ایک دیا دہلیز پر رکھ کر

نشانی چھوڑ دے کہ محو ہے یہ قبر

اس میں دوسرا آ    کر نہیں لیٹے

مَیں شب کو کیسے بتلاؤں

بہت دن مرے آ  نگن میں یوں آدھے ادھورے سے

کفن اوڑھے پڑے ہیں کتنے سالوں سے

جنہیں میں آج تک دفنا نہیں پایا 

شاعر: گلزار

Raat

Miri   Daihleez     Par   Baithi   Hui    Zaano   Pe   Sar   Rakhay

Yeh   Shab   Afsos   Karnay   Aai   Hay    Keh   Meray   Ghar   Pe

Aaj   Hi   Jo   Mar   Gaya   Hay   Din

 Wo   Din   Hamzaad   Tha   Uss   Ka

Wo   Aaai   Hay   Keh   Meray   Ghar   Men    Uss   Ko   Dafn   Kar   K

Aik   Diya   Daihleez   Par    Rakh   Kar

 Nishaani   Chorr   Day   Keh   Mehv   Hay   Yeh    Qab r

Iss   Men   Doosra   Aa   Kar   Nahen   Laitay

Main   Shab   Ko   Kaisay   Batlaaun

 Bahut   Din   Miray   Aangan   Men   Yun   Aadhay   Adhooray   Say

 Kafn   Aorrhay   Parray   Hen    Kitnay    Saalon   Say

Jinhen   Main   Aaj   Tak   Dafnaa   Nahen   Paaya

Poet: Gulzar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -