اُسے کاغذ پہ بنا دیتی ہوں| یاسمین حمید |

اُسے کاغذ پہ بنا دیتی ہوں| یاسمین حمید |
اُسے کاغذ پہ بنا دیتی ہوں| یاسمین حمید |

  

اُسے کاغذ پہ بنا دیتی ہوں

شہر کو آگ لگا دیتی ہوں

جب بھی ساحل پہ نظر آتے ہو

ریت میں رنگ ملا دیتی ہوں

پھر مجھے رات کڑی لگتی ہے

جب چراغوں کو جلا دیتی ہوں

بھر کے آنکھوں میں سمندر اپنا

اسے صحرا کی ہوا دیتی ہوں

بات کہنے کو تو کیا ہوتی ہے

پوچھتے ہو تو بتا دیتی ہوں

دیکھ لیتی ہوں تماشا اپنا

اور پھر پردہ گرا دیتی ہوں

شاعرہ:یاسمین حمید

 ( شعری مجموعہ:دوسری زندگی؛سالِ اشاعت،2007)

Usay   Kaaghaz   Pe   Banaa   Daiti   Hun

Shehr   Ko   Aag   Lagaa   Daiti   Hun

 Jab   Bhi   Saahil   Pe   Nazar   Aatay   Ho

Rait   Men   Rang   Milaa   Daiti   Hun

 Phir   Mujhay   Raat    Karri   Lagti   Hay

Jab   Charaaghon   Ko   Jalaa   Daiti   Hun

 Bhar   K   Aankhon   Men    Samanndar   Apna

Usay   Sehra   Ki   Hawaa   Daiti   Hun

 Baat   Kehnay   Ko  To   Kaya   Hoti   Hay

Poochhtay   Ho   To   Bataa    Daiti    Hun

 Daikh   Laiti   Hun   Tamaasha   Apna

Aor   Phir   Parda   Giraa   Daiti   Hun

 Poetess: Yasmeen    Hameed

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -