افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے | یاسمین حمید |

افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے | یاسمین حمید |
افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے | یاسمین حمید |

  

افق تک میرا صحرا کھل رہا ہے 

کہیں دریا سے دریا مل رہا ہے 

لباس ابر نے بھی رنگ بدلا 

زمیں کا پیرہن بھی سل رہا ہے 

اسی تخلیق کی آسودگی میں 

بہت بے چین میرا دل رہا ہے 

کسی کے نرم لہجے کا قرینہ 

مری آواز میں شامل رہا ہے 

کسی کے دل کی ناہمواریوں پر 

سنبھلنا کس قدر مشکل رہا ہے 

شاعرہ: یاسمین حمید

 ( شعری مجموعہ:دوسری زندگی؛سالِ اشاعت،2007)

Ufaq   Tak   Mera   Sehra   Khil   Raha   Hay

Kahen   Darya   Say   Darya   Mil   Raha   Hay

 Libaas-e-Abr   Nay   Bhi   Rang   Badla 

Zameen   Ka   Pairhan   Bhi   Sil   Raha   Hay

Usi   Takhleeq   Ki   Asoodgi   Men

Bahut   Be Chain   Mera   Dil   Raha   Hay

 Kisi   K   Narm   Lehjay   Ka   Qareena 

Miri   Awaaz   Men   Shaamil   Raha   Hay

 Kisi   K   Dil   Ki   Nahamwaarion  Par

Sanbhalna   Kiss   Qadar   Mushkil   Raha   Hay

 Poetess: Yasmeen   Hameed

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -