’دال میں کالا ڈھونڈنے والوں کو کچھ نہیں ملے گا‘ ترجمان پنجاب حکومت حسان خاور نے اپوزیشن کو ’مفت مشورہ‘ دے دیا

’دال میں کالا ڈھونڈنے والوں کو کچھ نہیں ملے گا‘ ترجمان پنجاب حکومت حسان ...
’دال میں کالا ڈھونڈنے والوں کو کچھ نہیں ملے گا‘ ترجمان پنجاب حکومت حسان خاور نے اپوزیشن کو ’مفت مشورہ‘ دے دیا

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر اعلیٰ پنجاب کے معاون خصوصی برائے اطلاعات اور حکومت پنجاب کے ترجمان حسّان خاور نے اپوزیشن رہنماؤں کی طرف سے احتجاجی تحریک شروع کرنے کے بارے میں بیانات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکومت کہیں جانے والی نہیں ، دال میں کالا ڈھونڈنے والوں کو کچھ نہیں ملے گا، کسی کے خواب دیکھنے پر ہمیں کوئی اعتراض نہیں،احتجاج کرنا جمہوری حق ہے، صرف سر گودھا یا راولپنڈی ہی نہیں پورے پاکستان میں جو چاہے احتجاج کرے تاہم شہریوں کے لیے مشکلات پیدا کرنے اور قانون ہاتھ میں لینے والوں سے کوئی نرمی نہیں کی جائے گی۔

تفصیلات کے مطابق میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے حسان خاور کا کہنا تھا کہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ( پی ڈی ایم) کوئی اتحاد نہیں بلکہ یہ مفادات کی جنگ ہے،پی ڈی ایم میں شامل جماعتیں پہلے آپس میں مشورہ کرلیں کہ کیا کرنا ہے؟ کہیں کل پھر انہیں شرمندگی نہ اٹھانی پڑے،ن لیگ والے بھی پہلے یہ فیصلہ کرلیں کہ پارٹی کی قیادت کس کے پاس ہے؟ پھر احتجاج بھی کر لیں،ن لیگ کے تمام تر شور و غل کی وجہ عوام کی توجہ اپنے قومی جرائم اور منی لانڈرنگ سے ہٹانے کی کوشش ہے لیکن پاکستان کے با شعور عوام اب ان کی اصلیت سے اچھی طرح واقف ہو چکے ہیں، اپنے ملازمین کے اکاؤنٹس میں نامعلوم ذرائع سے آنے والے اربوں روپے کا جواب نہ دینے والے خود ساختہ طور پر شفافیت کے چیمپئین بن بیٹھے ہیں۔

حسّان خاور نے کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ عمران خان نے دونوں شاہی خاندانوں کی حکمرانی خطرے میں ڈال دی ہے،دونوں جماعتیں کسی بھی قیمت پر اپنا تخت واپس حاصل کرنا چاہتی ہیں، جمہوریت کے نام پر موروثی اقتدار کو تسلسل دینے والی دونوں جماعتیں عمران خان سے خوف زدہ ہیں، کیونکہ عمران خان نے سیاست میں ان کی اجارہ داری کو پاش پاش کر دیا ہے۔

حسان خاور نے کہا کہ حکومت نے ہیلتھ کارڈ کے ذریعے غریب اور امیر کا فرق ختم کر دیا ہے اور سفید پوش لوگوں کی امداد کے لئے احساس پروگرام شروع کیا ہے ، یہ سب پروگرام ریاست مدینہ کی پیروی میں کئے جا رہے ہیں، اسی طرح شہریوں کی سہولت کے لئے گراں فروشی کرنے والوں کے خلاف کارروائیاں بھی اسی سلسلے کی کڑی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ میڈیا کو چاہیے منی لانڈرنگ والوں پر بھی پروگرام کریں جن ڈرائیورز کے اکاونٹ میں اربوں روپے برآمد ہوتے ہیں،  ہم نے سیاست کا چلن بدل دیا ہے ،ہم بارش کے پانی میں کھڑے ہو کر سیاست نہیں کرتے،کالعدم تحریک لبیک کے حوالے سے جو بھی اقدامات ہوں گے ،قانون کے دائرے میں رہ کر ہوں گے ،کسی کو قانون کو ہاتھ میں لینے کی اجازت نہیں ہو گی ،ہر بات کا حل مذاکرات ہے۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -