وہ رکشہ ڈرائیور جو جہاز کا پائلٹ بن گیا، نوجوان کی دل کو چھو لینے والی کہانی

وہ رکشہ ڈرائیور جو جہاز کا پائلٹ بن گیا، نوجوان کی دل کو چھو لینے والی کہانی
وہ رکشہ ڈرائیور جو جہاز کا پائلٹ بن گیا، نوجوان کی دل کو چھو لینے والی کہانی

  

نئی دلی (نیوز ڈیسک) دولت اور عیش و عشرت میں آنکھ کھولنا ہر کسی کا نصیب نہیں ہوتا لیکن قدرت ہر ایک کو یہ موقع ضرور دیتی ہے کہ وہ محنت و ہمت سے دولت، حیثیت اور عزت حاصل کرلے۔

اخبار ’ٹائمز آف انڈیا‘ نے ایک ایسے ہی ہمت والے نوجوان شری کانت کی کہانی دنیا کے سامنے بیان کی ہے جو کبھی ڈلیوری بوائے اور رکشا ڈرائیور تھا لیکن آج بھارت کی ایک بڑی ائیرلائن کا پائلٹ ہے۔ اخبار کے مطابق غریب گھرانے میں آنکھ کھولنے والا شری کانت بچپن میں ڈلیوری بوائے کا کام کرتا تھا، جب تھوڑا بڑا ہوا تو رکشا چلانا بھی شروع کردیا۔ یہ چھوٹا سا لڑکا دن بھر کام بھی کرتا تھا اور ساتھ ہی پڑھائی بھی کرتا تھا۔ ایک دن شری کانت ائیرپورٹ پر کچھ سامان ڈلیور کرنے گیا تو کچھ کیڈٹوں سے بات چیت ہوئی اور یہ بھی پتا چلا کہ پائلٹ بننے کے خواہشمند قابل اور ذہین نوجوانوں کیلئے ایک سکالر شپ پیش کیا جارہا ہے۔ شری کانت اس وقت بارہویں جماعت کے امتحان کی تیاری کررہا تھا اس نے سکالر شپ کا پتہ چلتے ہی دن رات محنت شرع کردی اور پھر نہ صرف بارہویں جماعت کا امتحان شاندار انداز میں پاس کیا بلکہ پائلٹ بننے کیلئے سکالر شپ بھی حاصل کرلیا۔

ایک موبائل ایپ جو آپ کو بڑے دھوکے سے بچا سکتی ہے

جب اس نے ریاست مدھیا پردیش کے ایک فلائینگ سکول سے کمرشل پائلٹ کا لائسنس کامیابی سے حاصل کرلیا تو عالمی اقتصادی بحران کی وجہ سے ایک اور مسئلہ اس کا منتظر تھا۔ ایک عرصے تک کسی ائیرلائن نے پائلٹوں کی بھرتی نہ کی، لیکن دو ماہ قبل شری کانت کی قسمت نے پھر جوش مارا اور Indigo ائیرلائن نے اسے پائلٹ کی ملازمت دے دی۔ اب یہ رکشا چلانے والا لڑکا جہاز اڑاتا ہے اور بے شمار لوگوں کیلئے ایک ہیرو کی حیثیت رکھتا ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس