پشاور حملے کا منصوبہ افغانستان میں نہیں بنا: ترجمان افغان صدر، شواہد دینگے : سرتاج عزیز

پشاور حملے کا منصوبہ افغانستان میں نہیں بنا: ترجمان افغان صدر، شواہد دینگے : ...

کابل( اے این این،آ ن لا ئن ، ما نیٹرنگ ڈیسک ) افغانستان نے پشاور میں پاک فضائیہ کے کیمپ پر حملے میں ملوث ہونے کی تردید کر دی۔افغان صدر کے تر جما ن کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیاہے کہ پشاور میں پاک فضائیہ کے کیمپ پر دہشتگردحملے سے افغانستان کا کوئی تعلق نہیں ہم اس حوالے سے پاکستان کے دعوے کو سختی سے مسترد کرتے ہیں یہ محض الزام تراشی ہے ۔افغانستان اس عزم پر قائم ہے کہ ہم اپنی سرزمین کبھی بھی کسی دوسرے ملک کے خلاف دہشت گردی کی کارروائیوں اور حملے کیلئے استعمال نہیں ہونے دینگے ۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ افغانستان خود بھی دہشت گردی سے متاثرہ ملک ہے اور اس قسم کی کارروائیوں سے پیدا ہونے والے درد سے آگاہ ہے ہم متاثرہ خاندانوں کے غم میں برابر کے شریک ہیں ۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ افغانستان کا عقیدہ ہے کہ دہشت گردی بنی نوع انسان کے ساتھ کھلی دشمنی ہے اور یہ کہ اچھا یا برا دہشت گرد کوئی نہیں ہوتا دہشت گردوں کا کوئی دین یا سرحد نہیں ۔ دہشت گردی کی لعنت سے نمٹنے کیلئے خطے کی تمام حکومتوں خاص طور پر پاکستان اور افغانستان کو دیانتداری کے ساتھ مشترکہ طور پر کام کرنا ہوگا ۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ خیبرپختونخوا اور وزیرستان میں پاکستان کی طرف سے جاری فوجی آپریشن سے افغانستان اور پاکستان دونوں متاثر ہوئے ہیں افغان حکومت نے حالیہ سالوں میں دہشت گردی سے نمٹنے کیلئے بھرپور کوششیں کی ہیں ۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم ایک بار پھر پاکستان کو دہشت گرد گروپوں سے ایمانداری کے ساتھ نمٹنے کیلئے مل کر کام کرنے کی دعوت دیتے ہیں یہ خطے میں امن و استحکام کیلئے ناگزیر ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسلام آباد(اے این این) وزیر اعظم کے مشیر برائے امور خارجہ و قومی سلامتی سرتاج عزیز نے پاک فضائیہ کے بیس کیمپ پر حملے کا معاملہ افغانستان کے ساتھ اٹھانے کے فیصلے کی تصدیق کر دی ۔نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ پاکستان افغان حکومت کو پی اے ایف کیمپ پشاور پر حملے کے شواہد فراہم کرے گا ۔ سرتاج عزیز نے کہا کہ افغانستان کو وزیراعظم نواز شریف کے دورے میں طے پانے والے معاملات پر عملدرآمد کو یقینی بنانا چاہیے ۔ دونوں ممالک دہشت گردی کے خاتمے کے پابند ہیں جس کے لیے مشترکہ کوششوں اور انٹیلی جنس شیئرنگ کی ضرورت ہے ۔ باہمی تعاون سے ہی خطے میں دیرپا اور مضبوط امن قائم ہو سکے گا۔ذرائع کے مطابق حکومت بڈھ بیرایئر بیس حملے میں ملوث کالعدم تحریک طالبان کے خلاف کارروائی کیلئے افغان حکومت پر دباؤ بڑھانے کیلئے اعلیٰ سطحی وفد افغانستان بھیجے گا ۔ایک سینئر حکومتی عہدیدار کے مطابق حکومت بہت جلد کابل حکومت کو ایئر بیس حملے کے ٹھوس شواہد فراہم کرے گی۔عہدیدار کے مطابق پاکستان افغانستان تک یہ پیغام پہنچائے گا کہ اب ان کی سرزمین سے اس طرح کے دہشتگردانہ حملوں کو قطعی برداشت نہیں کیا جائے گا

مزید : صفحہ اول