یمنی باغیوں کی طرح پاکستان میں بھی کچھ لوگ حکومت کوکمزورکرناچاہتے ہیں،دونوں ممالک کی دوستی کو لفظوں میں بیان نہیں کیاجاسکتا:سعودی سفیر

یمنی باغیوں کی طرح پاکستان میں بھی کچھ لوگ حکومت کوکمزورکرناچاہتے ہیں،دونوں ...
یمنی باغیوں کی طرح پاکستان میں بھی کچھ لوگ حکومت کوکمزورکرناچاہتے ہیں،دونوں ممالک کی دوستی کو لفظوں میں بیان نہیں کیاجاسکتا:سعودی سفیر

  

اسلام آباد(ڈی این اے )پاکستان میں تعینات سعودی سفیر عبداللہ الزہرانی نے کہا ہے کہ سعودی عرب کی خواہش ہے کہ تمام مسلمان ملک آپس میں بھائی چارے کوفروغ دیں اورآپس کے اختلافات کوبھلادیں،انہوں نے کہا کہ سعودی عرب دنیا کے دیگر ممالک کیساتھ بھی اچھے تعلقات کاہمیشہ سے خواہاں رہاہے اورآئندہ بھی اس مقصد کےلئے کام کرتا رہیگا،یمنی باغیوں کی طرح پاکستان میں بھی کچھ لوگ حکومت کو کمزور کرناچاہتے ہیں ، حوثی باغی ملک کااسلامی تشخص بربادکرنے پرتلے ہوئے تھے،ان کیخلاف کارروائی کرناضروری ہوگیاتھا،پاکستان نے بھی باغیوں کوکچلنے کےلئے کئی اقدامات کئے،پاک سعودی دوستی کولفظوں میں بیان نہیں کیاجاسکتا۔

سعودی عرب کے قومی دن کے حوالے سے اپنے پیغام میں سعودی سفیر عبداللہ الزہرانی کاکہناتھاکہ دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت سے متعلق سعودی عرب کاموقف واضح ہے کہ اس سلسلہ میں اقوام متحدہ نے جو اصول وضع کررکھے ہیں ان کی پاسداری ہم سب پرلازم ہے ، سعودی سفیر نے کہا کہ پاکستان ایک برادر ملک ہے اور سعودی عرب کے پاکستان کیساتھ تعلقات ہمیشہ سے خوشگواررہے ہیں،انہوں نے کہا کہ ان کی پاکستان میں دوبارہ تعیناتی سے دونوں ملکوں کے تعلقات مزیدمستحکم ہوںگے ،سعودی سفیر نے کہا کہ ہم 85واں قومی دن اس عہد کی تجدید کیساتھ منائیں گے کہ مستقبل میں ہم نے عالمی امن کےلئے کوششیں جاری رکھنی ہیں،اس کےساتھ ساتھ ہمسایہ ملکوں کےساتھ تعلقات کافروغ بھی سعودی عرب کی خارجہ پالیسی کااہم اصول ہے ۔انہی اصولوں کومدنظررکھتے ہوئے سعودی عرب نے یمن کی حکومت کی سپورٹ کی اور باغیوں کاخاتمہ کرنے کےلئے یمن حکومت کوہرممکن مددفراہم کی ، انہوں نے مزید کہا کہ یمن کے باغی ملک کااسلامی تشخص بربادکرنے پرتلے ہوئے تھے وہ یمن کو اندھیروں میں دھکیلناچاہتے تھے ،لہٰذا ان کیخلاف کارروائی کرنا ضروری ہوگیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب یمن کے معاملے پر خاص طور پرپاکستان کے عوام اورپاکستان کی حکومت کاشکریہ اداکرناچاہتا ہے جنہوں نے اس آزمائش کے وقت میں سعودی عرب کاساتھ دیا،یمن میں جوصورتحال تھی وہ پاکستان سے ملتی جلتی تھی،پاکستان میں بھی کچھ لوگ اپنے اوچھے ہتھکنڈوں سے حکومت کوکمزورکرناچاہتے ہیں جبکہ یمن میں بھی باغی حکومت کوکمزورکرکے اقتدارپرقبضہ کرناچاہتے تھے ،پاکستان کی حکومت نے بھی باغیوں کوکچلنے کےلئے کئی اقدامات کئے ہیں ، سعودی سفیر نے سعودی پاکستان دوستی کے بارے میں کہا کہ اس دوستی کولفظوں میں بیان نہیں کیاجاسکتا،بلاشبہ دونوں ملکوں کے درمیان دوستی لازوال ہے اوردونوں ملکوں کے عوام ایک دوسرے کےلئے انتہائی گہرے جذبات رکھتے ہیں۔ثقافتی تعلقات کاذکر کرتے ہوئے سعودی سفیر نے کہا کہ ثقافت کاپہلوکاملکوں کے درمیان تعلقات میں ہمیشہ سے اہم کرداررہا ہے ،انہوں نے امیدظاہر کی کہ اس میدان میں بھی سعودی عرب اورپاکستان ایک دوسرے کیساتھ تعاون کرتے رہیں گے،معاشی تعلقات کاذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دونوں ملک فری اکنامک پریقین رکھتے ہیں اورمفاد عامہ کے کاموں میں بڑھ چڑھ کرحصہ لیتے ہیں ۔ سعودی سفارتخانے نے ہمیشہ پاکستانی سرمایہ کاروں کی حوصلہ افزائی کی ہے کہ وہ سعودی عرب میں جائیں اوروہاں سرمایہ کاری کریں،اسی طرح سعودی بزنس مین بھی پاکستان میں آکرتجارت کریںمعاشی تعلقات کوفروغ دیکردونوں ملکوں کے درمیان روابطہ کومزیدفروغ دیاجاسکتاہے ۔

مزید : بین الاقوامی