لاہور ہائیکورٹ کی آئی ٹی برانچ کی ایڈیشنل رجسٹرار اور ڈپٹی رجسٹرار معطل

لاہور ہائیکورٹ کی آئی ٹی برانچ کی ایڈیشنل رجسٹرار اور ڈپٹی رجسٹرار معطل

  

 لاہور(نامہ نگار خصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے مقدمات کی پیشی فہرستوں میں سنگین بدانتظامی کا اور سائلین کو پیش آنیوالی مشکلات کا نوٹس لیتے ہوئے آئی ٹی برانچ کی آئی ٹی برانچ کی ایڈیشنل رجسٹرار صائمہ مشتاق اور ڈپٹی رجسٹرار افتخار احمد کو معطل کر دیا ۔لاہور ہائیکورٹ میں انیس ستمبر کیلئے مقدمات کی پیشی فہرستوں میں سنگین بدانتظامی پر لاہور ہائیکورٹ کے تمام ججز نے چیف جسٹس سے معاملہ اٹھایا جس پر فوری انکوائری کا حکم دیا گیا، ذرائع کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کی آئی ٹی برانچ کی سنگین غفلت کے باعث تمام مقدمات کی پیشی فہرستیں غلط جاری ہو گئیں، عام نوعیت کے فوجداری مقدمات دہشت گردی مقدمات کی سماعت کرنے والے ججز کے سامنے سماعت کیلئے فکس کر دیئے گئے جس کی وجہ سے نہ صرف سائلین بلکہ ججز کو بھی سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، سارا دن ججز کے سامنے دوسری کیٹیگری کے مقدمات کی پیشی کے باعث سائلین عدالت میں پیش ہوتے تو انہیں یہ جواب دیا جاتا کہ انکا مقدمہ غلطی سے اس عدالت میں فکس ہو گیا، ذرائع کے مطابق انکوائری میں یہ بات سامنے آئی کہ مقدمات کی پیشی فہرستوں کی تیاری اور اجرا میں سنگین غفلت برتی گئی جس کی وجہ سے غلط پیشی فہرستیں تیار جاری ہوئیں، انکوائری کی روشنی میں چیف جسٹس سید منصور علی شاہ نے سنگین غفلت کا مظاہرہ کرنے پر آئی ٹی برانچ کی ایڈیشنل رجسٹرار صائمہ مشتاق اور ڈپٹی رجسٹرار افتخار احمد کو معطل کر دیا ہے، ذرائع کے مطابق چیف جسٹس کا کہنا ہے کہ ایسی غفلت اور غیرذمہ داری کا مظاہرہ کرنے والے افسروں کو برداشت نہیں کیا جا سکتا، رجسٹرار لاہور ہائیکورٹ نے دونوں افسروں کی معطلی کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا، دونوں افسروں کیخلاف پہلے بھی آئی ٹی کے معاملات میں سنگین غفلت کے واقعات سامنے آ چکے ہیں، رجسٹرار آفس کے ذرائع کا کہنا ہے کہ ایڈیشنل رجسٹرار صائمہ مشتاق کمپیوٹر سائنسز کا کوئی تجربہ ہی نہیں رکھتیں۔

مزید :

علاقائی -