بڈھاسعودی شوہر اپنی جوان دلہن کو ایسا شرمناک کام کرنے پر مجبور کرتا رہاکہ جان کر عدالت بھی چیخ اٹھی

بڈھاسعودی شوہر اپنی جوان دلہن کو ایسا شرمناک کام کرنے پر مجبور کرتا رہاکہ ...
بڈھاسعودی شوہر اپنی جوان دلہن کو ایسا شرمناک کام کرنے پر مجبور کرتا رہاکہ جان کر عدالت بھی چیخ اٹھی

  

ریاض(مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی عرب میں ایک بوڑھا شوہر اپنی نوجوان دلہن کو ایسے شرمناک کام پر مجبور کرتا رہا کہ وہ خلع کے لیے عدالت پہنچ گئی جہاں احوال سن کر عدالت بھی چیخ اٹھی۔ عرب نیوز کی رپورٹ کے مطابق اس 55سالہ شوہر نے 22سالہ لڑکی سے شادی کی اور اسے ذہنی و جسمانی تشدد کا نشانہ بناتا رہا اور منشیات استعمال کرنے پر مجبور کرتا رہا، جس پر لڑکی جدہ کی فیملی کورٹ پہنچ گئی اور خلع کے لیے دعویٰ دائر کر دیا۔ عدالت نے شوہر کا جرم ثابت ہونے پر لڑکی کے حق میں فیصلہ دیتے ہوئے دونوں کی طلاق کروا دی ہے۔

’سعودی عرب میں یہ شرمناک کام کرنے میں خواتین مردوں سے آگے نکل گئیں ہیں‘

رپورٹ کے مطابق لڑکی نے عدالت کو بتایا کہ ”میرا شوہر مجھے تشدد کا نشانہ بناتا ہے۔ خود بھی منشیات کا عادی ہے اور مجھے بھی نشہ کرنے پر مجبور کرتا ہے۔میں ہر بار انکار کرتی ہوں جس پر وہ مجھے مارتا پیٹتا ہے اور بدکلامی کرتا ہے۔“ لڑکی نے جسمانی تشدد کا شاہ فہد ہسپتال سے حاصل کیا گیا میڈیکل سرٹیفکیٹ بھی عدالت میں بطور ثبوت پیش کیا۔ شوہر نے پہلے بیوی کے الزامات مسترد کر دیئے تاہم جب میڈیکل رپورٹ اسے دکھائی گئی تو اس نے تشدد کرنے کا اعتراف کر لیا اور بہانہ تراشا کہ وہ رات کو بلاوجہ گھر سے باہر جاتی تھی اس لیے اسے پیٹا۔ اس پر عدالت نے حکم دیا کہ اس شخص کا ریکارڈ چیک کیا جائے کہ یہ پہلے کسی مجرمانہ سرگرمی میں ملوث رہا ہے یا نہیں۔ پولیس نے اپنی رپورٹ میں عدالت کو بتایا کہ ملزم اس سے قبل بھی دوبار شراب اور چرس پینے کے جرم میں جیل جا چکا ہے۔جس پر عدالت نے بیوی کے حق میں فیصلہ سنا دیا۔ رپورٹ کے مطابق سعودی عدالتی ذرائع کا کہنا ہے کہ ”ملک میں 80فیصد خلع کے کیس شوہروں کے نشے کا عادی ہونے کی وجہ سے دائر کروائے جا رہے ہیں۔“

مزید :

عرب دنیا -