”وہ ہمارے اہم حصے کو اس طرح ہاتھ لگاتا تھا جیسے گاڑی کی ہیڈ لائٹس صاف کررہاہو“ برطانوی عدالت میں ایسا مقدمہ پیش کہ جج بھی سر پکڑ کربیٹھ گئے

”وہ ہمارے اہم حصے کو اس طرح ہاتھ لگاتا تھا جیسے گاڑی کی ہیڈ لائٹس صاف ...
 ”وہ ہمارے اہم حصے کو اس طرح ہاتھ لگاتا تھا جیسے گاڑی کی ہیڈ لائٹس صاف کررہاہو“ برطانوی عدالت میں ایسا مقدمہ پیش کہ جج بھی سر پکڑ کربیٹھ گئے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) برطانیہ کے شہر ہیچن میں ایمبولینس اور فائر سروس میں بھرتی سے قبل خواتین کا طبی معائنہ کرنے والے ڈاکٹر پر ایسا شرمناک الزام عائد کر دیا گیا ہے کہ عدالت میں جج بھی سر پکڑ کر بیٹھ گئے۔ برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق 51سالہ ڈاکٹر رابرٹ لیوس پر طبی معائنے کے دوران 6خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کرنے اور جنسی حملہ کرنے کے الزامات کے تحت مقدمہ درج کروایا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ 1999ءسے2007ءکے دوران ملزم نے دوران ڈیوٹی 6خواتین کے مخصوص جسمانی اعضاءکو چھوا اور ان پر جنسی حملہ کیا۔ خواتین نے عدالت میں بتایا ہے کہ ”ملزم ہمارے جسم کے مخصوص حصے پر یوں ہاتھ پھیرتا تھا جیسے گاڑی کی ہیڈلائٹس صاف کر رہا ہو۔“

”میری بیوی کے میرے علاوہ بھی سات شوہر ہیں“بھارتی مرد بیوی کیخلاف تھانے پہنچ گیا

پراسیکیوٹر مارک فین ہالز کاعدالت میں کہنا تھا کہ ”ملزم انتہائی چالاکی سے اور سوچ سمجھ کر خواتین جنسی حملے کرتا تھا تاکہ پکڑا نہ جائے۔ اس نے ایمبولینس اور فائر سروس میں بھرتی ہونے کے لیے آنے والی نوجوان لڑکیوں کی مجبوری کا ناجائز فائدہ اٹھایا ہے۔ انہیں بھرتی ہونے کے لیے کسی بھی طرح اپنا میڈیکل پاس کروانا ہوتا تھا۔ ان کی اسی کمزوری سے ملزم نے فائدہ اٹھایا۔ ان کے طبی معائنے کے دوران یہ چھاتی اور ہرنیا کے معائنے کا بہانہ کرکے انہیں جنسی طور پر ہراساں کرتا تھا۔ متعدد بار اس کے خلاف ایسی شکایات درج کروائی جا چکی ہیں۔“ مقدمے کی سماعت تاحال جاری ہے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -