عدم پیشی پر شریف فیملی کے پہلے وارنٹ گرفتاری پھر اشتہاری ،3سال قیداور جائیداد ضبط کی جاسکتی ہے،آئینی وقانونی ماہرین

عدم پیشی پر شریف فیملی کے پہلے وارنٹ گرفتاری پھر اشتہاری ،3سال قیداور ...
عدم پیشی پر شریف فیملی کے پہلے وارنٹ گرفتاری پھر اشتہاری ،3سال قیداور جائیداد ضبط کی جاسکتی ہے،آئینی وقانونی ماہرین

  

لاہور (ویب ڈیسک ) آئینی اور قانونی ماہرین نے کہا ہے احتساب عدالت میں پیش نہ ہونے پر شریف فیملی کے وارنٹ گرفتاری جاری ہو سکتے ہیں،پھر بھی پیش نہیں ہوتے تو اشتہاری قرار دیا جا سکتا ہے جبکہ ایک صورت ان کی شنوائی کا حق ساقط کر کے غیر موجودگی میں کار روائی کا آغاز ہو سکتا ہے۔

روزنامہ دنیا کے مطابق جسٹس ریٹائرڈ ملک قیوم نے کہا کسی کو نوٹس کی تعمیل ہو گئی اور وہ پیش نہیں ہوتا تو پھر وارنٹ گرفتاری جاری ہوں گے۔سینئر قانون دان حامد خان نے کہا اشتہاری بھی قرار دیا جا سکتا ،نظر ثانی اپیل مسترد ہونے کے بعد پیش نہ ہونے کا کوئی جواز نہیں۔ ڈاکٹر خالد رانجھا نے کہا وارنٹ گرفتاری جاری ہونے کے بعد مزید کارروائی شروع ہو گی۔

سپریم کورٹ بار کے سابق صدر علی ظفر نے کہا کہ اشتہاری ہونے پر 3 سال قید کی سزا ہو سکتی ہے۔سپریم کورٹ بار کے سیکرٹری آفتاب باجوہ نے کہا نیب کے سیکشن 88 کے تحت تمام جائیداد ضبط ہو سکتی ہے۔

مزید : لاہور