میر مرتضیٰ بھٹو کی یاد میں

میر مرتضیٰ بھٹو کی یاد میں
میر مرتضیٰ بھٹو کی یاد میں

  


میر مرتضیٰ بھٹو ایک خوش شکل،نفیس شخصیت کا پیکر تھا، بلکہ خوش اخلاق،دلیر اور بہادر تھا۔ جرأت و بہادری اپنے عظیم والد ذوالفقار علی بھٹو شہید سے ودیعت ہوئی تھی۔جواں مرد میر مرتضیٰ بھٹو کی نمایاں خصوصیت اس کا چھ فٹ سے زیادہ قدکاٹھ تھا،اپنی والدہ کی نظر میں وہ ان کے شوہر کا پر تو تھا۔بیگم نصرت بھٹو عموماً کہتی تھیں جب مرتضیٰ ڈرائنگ روم میں داخل ہوتا ہے تو انہیں اس پر بھٹو صاحب کا شائبہ ہوتا ہے۔میر مرتضیٰ بھٹو کے ساتھ میری رفاقت کا آغاز مارچ1978ء میں ہوا اور اس کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا۔ 18مارچ1978ء کو لاہور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس مولوی مشتاق حسین نے ایک جھوٹے مقدمہ ئ قتل میں وزیراعظم پاکستان ذوالفقار علی بھٹو کو سزائے موت کا حکم سنایا۔

تو اس وقت اندرون ملک اور بیرون ملک ایک کہرام مچ گیا،پوری دُنیا میں صدائے احتجاج بلند ہوئی اور اسے مقدمے کا قتل قرار دیا گیا۔میر مرتضیٰ بھٹو اس وقت آکسفورڈ میں زیر تعلیم تھا،اس ہولناک خبر کے بعد وہ لندن منتقل ہو گیا۔ اپنے والد کی زندگی بچانے کے لئے ایک عالمگیر مہم کا آغاز کیا۔ اس نے دن رات ایک کرکے انصاف کے حصول کے لئے عالمی ضمیر کو آواز دی اور اپنے ہم وطنوں کے اشتراک سے لندن اور انگلینڈ کے دوسرے شہروں میں بڑے مظاہروں کا انتظام کیا، ان میں خود شریک ہوا۔ پاکستانیوں کے شدید احتجاجی مظاہرے منظم کئے۔ اس دوران ان کے چھوٹے بھائی شاہنواز بھٹو سوئٹزرلینڈ سے تعلیم کا سلسلہ منقطع کرکے لندن آ گئے اور اپنے والد کی زندگی بچانے کی تحریک میں شامل ہو گئے۔

بیگم نصرت بھٹو کی ہدایت پر میر مرتضیٰ نے مجھے اپنی مہم کا حصہ بنا لیا، چنانچہ جدوجہد کی یہ رفاقت قریبی تعلق کے رشتہ میں ڈھل گئی۔ ہم نے بڑے منظم اور موثرانداز میں قائد عوام منتخب وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو کی زندگی بچانے کی مہم عالمی سطح پر اجاگر کی اور پوری دنیا میں میر مرتضیٰ بھٹو کی آواز سنی جانے لگی۔ اس نے مختلف اسلامی ممالک اور دیگر سربراہوں سے ملاقات اور جان بچانے کی اپیل کی۔ دُنیا کے دورے کئے اور لندن کے محاذ پر میں سرگرم عمل رہا، نصف شب تک پاکستانیوں سے روابط کے پروگرام ترتیب دیئے اور مساوات ویکلی کے ذریعے سے عوام کو اصل حقائق سے آگاہ کرنے کا مشن جاری رکھا۔اس محنت کے نتیجے میں لندن میں تاریخی مظاہرے ہوئے، جن میں پاکستانیوں نے مختلف شہروں سے آ کر بھرپور شرکت کی اور ان کی قیادت میر مرتضیٰ بھٹو اور شاہنواز بھٹو نے کی۔ یہ بڑے سخت دن تھے، لیکن ہمت اور حوصلے جوان تھے۔ دونوں بھائیوں نے اپنے والد کے مقدمہ قتل کو ایک عالمی موضوع بنا دیا اور دُنیا میں حکومت وقت کے اس اقدام کے خلاف بھرپور نفرت کا اظہار ہوا۔ میر مرتضیٰ بھٹو کی ان کاوشوں سے دونوں بھائیوں کا وقار بھی بلند ہوا۔بدقسمتی سے یہ کوشش کامیاب نہ ہوئی اور جنرل ضیاء الحق نے طے شدہ منصوبے کے تحت پاکستان کے ہردلعزیز وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو کو 4اپریل 1979ء کو شہید کر دیا۔ اس نے اسلامی ممالک کے سربراہوں کی جان بخشی کی اپیل کو نظر انداز کرتے ہوئے اپنے مذموم ارادے کو پایہئ تکمیل تک پہنچا دیا۔ اسے یہ خوف دامن گیر تھا کہ اگر مسٹر بھٹو زندہ رہے تو پھر ڈکٹیٹر کا اپنا انجام بخیر نہیں ہو گا۔

پاکستان کا یہ آمر میر مرتضیٰ بھٹو اور شاہنوازبھٹو کی بیرون ملک عالمی رائے عامہ کو ہموار کرنے کی سرگرمیوں سے بھی خائف تھا،چنانچہ اس ٹولے نے بھٹو صاحب کے بیٹوں کو بھی نشانے پر رکھ لیا،ان کے خلاف منصوبے اور سازش تیار کی گئی۔اسی منصوبے اور سازش کا نتیجہ تھا کہ میر شاہنواز بھٹو کو فرانس کے شہر وینس میں اس کی بیوی ریحانہ کے ہاتھوں زہر دے کر ہلاک کر دیا گیا۔وہ چھ ماہ تک فرانسیسی حکومت کی تحویل میں رہی اور بعدازاں اسے پُراسرار طور پر قید سے رہا کر دیا گیا۔ دونوں بھائیوں کی زندگی کا یہ اہم موڑ تھا۔ وہ جذباتی حکمت عملی کی وجہ سے جلاوطن رہے۔ کچھ عرصہ کابل ان کی سرگرمیوں کا مرکز رہا،جہاں انہوں نے مسلح جدوجہد شروع کی۔پی پی کے بہت سے کارکن وطن چھوڑ کر اس کا حصہ بنے، لیکن حکومتی طاقت اور وسائل سے اس جدوجہد کو ناکام بنا دیا گیا اور بہت سے کارکنوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، دربدر ہوئے۔ اکثر نے یورپی ممالک میں سیاسی پناہ لی اور نئی زندگی شروع کی۔ وہ ابتدائی مشکلات کے باوجود حالات کا سامنا کرکے خوشحال زندگی بسر کرنے لگے۔ انہیں بیرون ممالک کے لئے ویزہ حاصل کرنے کی ضرورت پیش نہ تھی اور آج کل ان کے بچے اعلیٰ تعلیم حاصل کر کے وہاں کی سوسائٹی میں اہم رول ادا کر رہے ہیں اور جدوجہد کے ثمرات حاصل کر رہے ہیں۔

اس مسلح جدوجہد میں کئی ایسے جاسوس بھی شریک ہو گئے جنہیں حکامِ وقت نے اس کی ترغیب دے کر مسلح جدوجہد کا حصہ بنایا۔انہوں نے دغا کیا اور میرمرتضیٰ بھٹو کے خلاف سازشوں کی آبیاری کی جو انجام کار خود میرمرتضیٰ بھٹو کے قتل کا باعث بنی۔ محترمہ بے نظیر بھٹو ان دراندازوں سے بڑی پریشان تھیں،وہ اکثر اس خدشے کا اظہار کرتی تھیں اور اپنے بھائی کو بھی اپنے خدشات سے آگاہ کیا کہ اپنی صفوں میں مارِ آستین اور حکومت کے کارندوں سے بچو۔ فکر مند ہوں کہ یہ آ پ کو دغا دیں گے اور آپ کی جان کے لئے خطرہ ہوں گے۔ ان کے یہ خدشات انجام کار درست ثابت ہوئے اور وہ اپنے دوسرے بھائی کو بھی کھو بیٹھیں۔ میر مرتضیٰ بھٹو خاندان کا آخری مرد تھا۔ میر مرتضیٰ بھٹو کا یہ المناک انجام بی بی شہید اور بھٹو خاندان کے لئے ایک سانحہ عظیم تھا۔یہاں یہ ذکر بھی ناگزیر ہے کہ 9ستمبر 1996ء کو میرے ہاں میرمرتضیٰ بھٹو کی سالگرہ کا پیشگی ڈنر تھا،جس میں آمنہ پراچہ ان کے مرحوم شوہر سلیم ذوالفقار علی خان، میر مرتضیٰ کے دوست نجیب ظفر اور ان کی اہلیہ شریک تھے۔ ڈنر بڑے خوشگوار ماحول میں ہوا۔ اس موقع پر وزیراعظم بے نظیر بھٹو نے بھی فون کرکے نیک خواہشات کا اظہار کیا تھا۔ میر مرتضیٰ بھٹو بڑا خوش تھا اور ہم سب بھی۔ وزیراعظم بے نظیر بھٹو نے اپنے بھائی کی سالگرہ کے دن 18ستمبرکو-70 کلفٹن میں کیک اور پھول بھیج کر مبارکباد دی تھی، میر مرتضی بھٹو سے مارچ 1978ء میں رفاقت کا جو سلسلہ شروع ہوا تھا وہ 20ستمبر 1996ء کو اختتام پذیر ہوا اور رفاقت دم توڑ گئی۔ میر مرتضیٰ بھٹو کا یومِ ولادت 18ستمبر اور یومِ وفات 20ستمبر ہے۔خداوند کریم ان کی مغفرت فرمائے۔آمین!

مزید : رائے /کالم


loading...