پروفیسرعبد الکلام بھارت کے صدر بنے ،ہم نے اساتذہ کو بٹھا دیا،سپریم کورٹ کے پنجاب یونیورسٹی میں قانون کے پروفیسر کی تعیناتی سے متعلق کیس میں ریمارکس

پروفیسرعبد الکلام بھارت کے صدر بنے ،ہم نے اساتذہ کو بٹھا دیا،سپریم کورٹ کے ...
پروفیسرعبد الکلام بھارت کے صدر بنے ،ہم نے اساتذہ کو بٹھا دیا،سپریم کورٹ کے پنجاب یونیورسٹی میں قانون کے پروفیسر کی تعیناتی سے متعلق کیس میں ریمارکس

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے پنجاب یونیورسٹی میں قانون کے پروفیسر کی تعیناتی سے متعلق کیس میں پیر کو عمل درآمد رپورٹ طلب کرلی۔جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ہم اپنے اساتذہ کے ساتھ یہ سلوک کرتے ہیں، پروفیسرعبد الکلام بھارت کے صدر بنے اور ہم نے اساتذہ کو بٹھا دیا، جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ ہم اس لیے پیچھے رہ گئے ہیں کیوں کہ ہمیں علم سے محبت نہیں رہی، تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں پنجاب یونیورسٹی میں قانون کے پروفیسر کی تعیناتی سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی، جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی،وکیل درخواست گزار نے کہا کہ درخواست گزار پنجاب یونیورسٹی کی 150 سالہ تاریخ میں پہلی خاتون پروفیسرہیں، یونیورسٹی کی جانب سے ہائیکورٹ میں میٹنگ منٹس سے متعلق غلط بیانی کی گئی،جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ تعلیمی اداروں میں سیاست ہوتی ہے، پارٹی بازی ہوتی ہے،یونیورسٹی میں سیاست کی وجہ سے قانون کے استاد کی اسامی خالی پڑی ہے، جسٹس عمر عطا بندیال نے استفسار کیا کہ کیا خالی آسامی کے لیے اشتہار دیا گیا ؟وکیل یونیورسٹی نے کہا کہ اشتہار دے دیا گیا ہے، خالی آسامیوں پر بھرتیوں کا عمل جاری ہے، جسٹس عمر عطابندیال نے استفسار کیاکہ یہ وائس چانسلر وہی ہیں جنھیں گرفتار کیا گیا ؟وکیل درخواست گزار نے کہا کہ جی یہ وائس چانسلر وہی ہیں،جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ ہم اپنے اساتذہ کے ساتھ یہ سلوک کرتے ہیں، پروفیسرعبد الکلام بھارت کے صدر بنا اور ہم نے اساتذہ کو بٹھا دیا، جسٹس عمر عطا بندیال نے کہا کہ ہم اس لیے پیچھے رہ گئے ہیں کیوں کہ ہمیں علم سے محبت نہیں رہی، عدالت نے پیر کو عمل درآمد رپورٹ طلب کرلی۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد


loading...