آئی ایم ایف سربراہ کا توانائی کے شعبے میں اصلاحات پر اظہار اطمینان

آئی ایم ایف سربراہ کا توانائی کے شعبے میں اصلاحات پر اظہار اطمینان
آئی ایم ایف سربراہ کا توانائی کے شعبے میں اصلاحات پر اظہار اطمینان

  


اسلام آباد(صباح نیوز)انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ(آئی ایم ایف)کے پاکستان، مشرق وسطی اور وسط ایشیا کے مشن کے سربراہ ارنیستو رمیریز ریگو نے وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان سے ملاقات کی اور ملک میں توانائی کے شعبے میں اصلاحات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے حوصلہ افزا قرار دیا۔

توانائی ڈویژن کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق وفاقی وزیر توانائی سے ملاقات میں ارنیستو نے اہداف کے حصول کے لیے کی جانے والی کوششوں کو سراہا اور نئی قابل تجدید توانائی کی پالیسی کے قیام کے لیے کی جانے والی کوششوں پر بھی اطمینان کا اظہار کیا۔آئی ایم ایف مشن کے سربراہ نے کہا کہ توانائی آئی ایم ایف پروگرام کا اہم حصہ ہے اور دیگر وسائل کے استعمال کی جانب منتقلی کے عمل کو سراہا جس سے ملک میں بجلی کی قیمتیں کم کرنے میں مدد ملی اور کہا کہ اس سے تمام شعبہ ہائے زندگی کے لوگ مستفید ہوں گے۔وزیر توانائی نے آئی ایم ایف کے وفد کو ریکارڈ وصولیوں اور لائن لاسز میں کمی کے حوالے سے کی جانے والی کوششوں سے بھی آگاہ کیا اور بتایا کہ پاور ڈویژن کی کوششوں سے گردشی قرضوں میں واضح کمی واقع ہوئی ہے۔بیان میں کہا گیا کہ گردشی قرضوں میں ہر ماہ 38ارب روپے کا اضافہ ہو رہا تھا تاہم گزشتہ مالی سال کے اختتام پر یہ کم ہو کر 26ارب روپے تک پہنچ گئے ہیں۔عمر ایوب نے کہا کہ جولائی کے مہینے میں یہ کارکردگی مزید حوصلہ افزا تھی اور گردشی قرضے کم ہو کر 18ارب روپے پر پہنچ گئے ہیں اور بجلی چوری اور ڈیفالٹرز کے خلاف کارروائی کے حوصلہ افزا نتائج برآمد ہو رہے ،وزیر توانائی نے وفد کو پاور ڈویژن کی جانب سے تکنیکی اور سسٹم کی بہتری کے لیے کیے جانے والے اقدامات سے بھی آگاہ کیا اور بتایا کہ ملک کے 80فیصد فیڈرز اب لوڈ مینجمنٹ سے پاک ہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومت توانائی کی پیداوار کے نئے وسائل تلاش کر رہی ہے تاکہ درآمدی فیول پر انحصار کر کے بجلی کی قیمتوں میں کمی کی جا سکے

مزید : اہم خبریں /قومی


loading...