صوبہ سرائیکستان رابطہ مہم‘ ظہور دھریجہ کی اہم شخصیات سے ملاقاتیں 

صوبہ سرائیکستان رابطہ مہم‘ ظہور دھریجہ کی اہم شخصیات سے ملاقاتیں 

  

ملتان (سٹی رپورٹر)وسیب کی مکمل حدود اور صوبہ سرائیکستان رابطہ مہم کے سلسلے میں سرائیکستان قومی کونسل کے صدرظہور دھریجہ نے سابق سینیٹر ظفر خان ڈھانڈلہ،سابق چئیرمین ضلع کونسل بھکرعلی خان ڈھانڈلہ اور ایم این اے ڈاکٹر افضل ڈھانڈلہ کے بھائی نصراللہ خان ڈھانڈلہ(بقیہ نمبر45صفحہ 6پر)

 ایڈووکیٹ سے ملاقاتیں کیں،اس موقع پر سرائیکی رہنماء فیاض خان بلوچ،محمد خان بلوچ،عنران خان گورمانی ممتاز ملک گورچھا،آصف دھریجہ،احسان اعوان ودیگر موجود تھے،ظہور دھریجہ نے کہا کہ تحریک انصاف نے 100دن میں صوبہ بنانے کا وعدہ کیا مگر 800 دن گزرنے کے باوجود صوبے کیلئے کوئی قدم نہیں اٹھایا گیا،حکمرانوں نے سول سیکرٹریٹ کا لولی پاپ دیکر وسیب کو ایک دوسرے سے لڑانے کی کوشش کی اور صوبہ بننے سے پہلے وسیب کو لولہا لنگڑا بنادیا اور بھکر،میانوالی،ٹانک،ڈی آئی خان سمیت وسیب کے 11اضلاع مجوزہ سرائیکی صوبے سے نکال دئیے گئے،ہمارا آنے کا مقصد یہ ہے کہ آپ صوبہ سرائیکستان کی حمایت کریں اور برسراقتدار جماعت سے مطالبہ کریں کہ وسیب کی شناخت اور مکمل حدود پر مشتمل صوبہ بنائیں۔ظفر خان ڈھانڈلہ نے کہا کہ ہم ہر فورم پر وسیب کا اور وسیب کے حقوق کا مطالبہ کرتے آ رہے ہیں اور ڈاکٹر افضل خان ڈھانڈلہ نے قومی اسمبلی کے فورم پر ایک بار نہیں بلکہ بار بار صوبے کا مطالبہ کر کے وسیب کی ترجمانی کی ہے۔نصراللہ خان ڈھانڈلہ نے کہا کہ ہم سرائیکی صوبے کی مکمل حمایت کرتے ہیں اس خطے کے لوگوں کیلئے سرائیکی صوبہ زندگی موت کا سوال ہے،میانوالی بھکر اور جھنگ کو بھی سرائیکی صوبے کا حصہ ہونا چاہئے۔نصراللہ خان ڈھانڈلہ نے کہا کہ تھل کو ڈویژن کا درجہ ملنا چاہئے،تھل میں نئی موٹروے بننی چاہئے،میڈیکل و کیڈٹ کالج کے ساتھ ساتھ تھل یونیورسٹی بھی بننی چاہئیے،بھکر کو سی پیک سے محروم کیا گیا ہے،بھکر سمیت پورے تھل کو ملتان اور میانوالی سی پیک سے لنک ملنا چاہئیے اور تھل میں ٹیکس فری انڈسٹریل زون بننا چاہئیے۔نصراللہ خان ایڈووکیٹ نے یہ بھی مطالبہ کیا وسیب کے لوگوں کو عدلیہ میں ججز کی تعیناتیوں میں حصہ ملنا چاہئیے،وسیب میں سپریم کورٹ کا بنچ ہونے ساتھ الگ ہائی کورٹ بھی ہونا چاہئیے اور سرائیکی صوبہ بھی بننا چاہئیے۔

ملاقاتیں 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -