پھر گئی آپ کی دو دن میں طبیعت کیسی  | اکبر الہٰ آبادی |

پھر گئی آپ کی دو دن میں طبیعت کیسی  | اکبر الہٰ آبادی |
پھر گئی آپ کی دو دن میں طبیعت کیسی  | اکبر الہٰ آبادی |

  

پھر گئی آپ کی دو دن میں طبیعت کیسی 

یہ وفا کیسی تھی صاحب یہ مروت کیسی 

دوست احباب سے ہنس بول کے کٹ جائے گی رات 

رند آزاد ہیں ہم کو شبِ فرقت کیسی 

جس حسیں سے ہوئی اُلفت وہی معشوق اپنا 

عشق کس چیز کو کہتے ہیں طبیعت کیسی

جس طرح ہو سکے دن زیست کے پورے کر لو

چار دن کے لیے انسان کو حسرت کیسی

ہے جو قسمت میں وہی ہوگا نہ کچھ کم نہ سوا 

آرزو کہتے ہیں کس چیز کو حسرت کیسی 

حال کھلتا نہیں کچھ دل کے دھڑکنے کا مجھے 

آج رہ رہ کے بھر آتی ہے طبیعت کیسی 

کوچۂ یار میں جاتا تو نظارہ کرتا 

قیس آوارہ ہے جنگل میں یہ وحشت کیسی 

حسنِ  اخلاق پہ جی لوٹ گیا ہے میرا

میں تو کشتہ تری باتوں کا ہوں صورت کیسی

آپ بوسہ جو نہیں دیتے تو میں دل کیوں دوں

ایسی باتوں پہ مری جان مروت کیسی

ہم نہ کہتے تھے کہ زینت بھی ہے معشوق کو شرط

کیوں، نظر آتی ہےآئینہ  میں صورت کیسی

شاعر: اکبر الہٰ آبادی

(کلیات اکبر الہٰ آبادی،حصہ اول )

Phir    Gai     Aap    Ki    Do    Din    Men    Tabeeat    Kaisi

Wafa    Kaisi    Thi Saahib    Yeh    Murawwat    Kaisi

Dost    Ahbaab    Say    Hans    Bol    K    Katt     Jaaey    Gi   Raat

Rind    Azaad   Hen   Ham    Ko     Shab-e- Furqat    Kaisi

Jiss    Haseen    Say   Hui    Ulfat    Wahi    Mashooq    Apna

 Eshq    Kiss    Cheez    Ko    Kehtay   Hen  Tabeat   Kaisi

Jiss    Tarah    Ho   Sakay   Din    Zeest    K    Pooray    Kar   Lo

Chaar    Din    K    Liay    Insaan    Ko     Hasrat    Kaisi

Hay   Jo   Qismat    Men    Wahi    Ho    Ga    Na    Kuch    Kam   Na   Siwaa

Aarzu    Kehtay    Hen    Kiss    Cheez   Ko    Hasrat    Kaisi

Haal    Khulta    Nahen    Kuch   Dil    K    Dharraknay    Ka   Mujhay

Aaj   Reh   Reh    K   Bhar   Aati   Hay   Tabeat   Kaisi

Koocha -e- Yaar    Men     Jaata   To    Nazaara   Karta

Qais    Awaara    Hay    Jangal    Men   Yeh   Wehshat    Kaisi

Husn-e- Ikhlaaq    Pe    Ji    Loat    Gaya    Hay   Mera

Masin   To    Kushta    Tiri    Baton    Ka    Hun    Soorat   Kaisi

Aap    Bosa    Jo    Nahen    Detay   To    Main    Dil    Kiun   Dun

Aisi    Baaaton    Men   Miri    Jaan    Murawwat   Kaisi

Ham    Na    Kehtay   Thay   Keh    Zeenat   Bhi    Hay    Mashooq    Ko   Shart

Kiun  ,   Nazar    Aati    Hay   Aaina   Men   Soorat   Kaisi

Poet: Akbar Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -