دل ترے غم کی کہانی مانگے | باقی صدیقی |

دل ترے غم کی کہانی مانگے | باقی صدیقی |
دل ترے غم کی کہانی مانگے | باقی صدیقی |

  

دل ترے غم کی کہانی مانگے

پیرِ صد سالہ جوانی مانگے

میں کہاں ہوں کہ ترا غم مجھ سے

میرے ہونے کی نشانی مانگے

دلِ تشنہ کا مداوا معلوم

آگ مانگے کبھی پانی مانگے

کون سے شہر میں جا کر رہیے

دل تو ہر چیز پرانی مانگے

دل کوآزار سا آزار لگا

غم کہانی سی کہانی مانگے

کوئی دریا میں سکوں ڈھونڈتا ہے

کوئی ساحل سے روانی مانگے

آ گئے غم میں کدھر ہم باقی

درد سا لفظ معانی مانگے

شاعر: باقی صدیقی

(شعری مجموعہ:کتنی دیر چراغ جلا )

Dil     Tiray    Gham    Ki    Kahaani   Maangay

Peer-e- Sad    Saala    Jawaani    Maangay

Main   Kahan    Hun    Keh     Tira    Gham    Mujh   Say

Meray    Honay    Ki    Nishaani   Maangay

Dil-e- Tashna    Ka    Madaawa    Maloom

Aag     Maangay    Kabhi    Paani    Maangay

Kon    Say    Shehr    Men    Jaa    Kar   Rahiay

Dil    To    Har    Cheez    Puraani    Maangay

Dil    Ko    Azaar    Sa    Azaar    Laga

Gham     Kahaani    Si    Kahaani    Maangay

Koi    Darya    Men    Sukoon    Dhoondta   Hay

Koi    Saahil    Say    Rawaani   Maangay

Aa    Gay    Gham    Men    Kidhar    Ham   BAQI

Dard    Sa    Lafz    Muaani   Maangay

Poet: Baaqi    Siddiqui

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -