ایک تصویر لگی ہے ابھی دیوار کےساتھ | باقی صدیقی |

ایک تصویر لگی ہے ابھی دیوار کےساتھ | باقی صدیقی |
ایک تصویر لگی ہے ابھی دیوار کےساتھ | باقی صدیقی |

  

دل اُلجھتا اہے ابھی دیدۂ بیدار کے ساتھ

ایک تصویر لگی ہے ابھی دیوار کےساتھ

صرف رودادِ چمن ہو تو کوئی بات نہیں

زیرِ بحث آپ بھی آتے ہیں گل و خار کے ساتھ

اپنے زخموں کو پڑے چاٹ رہے ہیں گھر میں

بات کرتے تھے زمانے سے جو تلوار کے ساتھ

پیاس کومے کی طر ح جھوم کے پی جاتاہے

اس طرح جاتا ہے دریا ترے میخار کے ساتھ

رنگ در رنگ ہیں اوہام کے پردے باقی

فاصلے بڑھتے گئے کوچۂ بازار کے ساتھ

شاعر: باقی صدیقی

(شعری مجموعہ:کتنی دیر چراغ جلا )

Dil    Ulajhat    Hay    Abhi   Deeda -e- Bedaar    K    Saath

Aik    Tasveer    Lagi    Hay    Abhi    Dewaar    K   Saath

Sirf     Roodaad-e- Chaman    Ho   To    Koi    Baat   Nahen

Zer-e- Behis    Aap    Bhi    Aatay    Hen    Gul -o- Khaar    K   Saath

Apnay    Zakhmon   Ko    Parray    Chaat    Rahay    Hen    Ghar   Men

Baat    Kartay    Thay    Zamaanay    Say   Jo    Talwaar    K   Saath

Payaas    Ko    May    Ki   Tarah    Jhoom    K    Pi    Jaata   Hay

Iss    Tarah    Jaata   Hay   Darya   Tiray    Maikhaar    K   Saath

Rang    Dar    Rang   Hen    Aohaam   K   Parday   BAQI

Faaslay    Barrhtay    Gaey    Koocha -o- Bazaar   K   Saath

Poet: Baqi   Siddiqui

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -