دشت حالات کے چھانے ہیں بہت | باقی صدیقی |

دشت حالات کے چھانے ہیں بہت | باقی صدیقی |
دشت حالات کے چھانے ہیں بہت | باقی صدیقی |

  

دشت حالات کے چھانے ہیں بہت

ہم نے دعوے تیرے مانے ہیں بہت

کہیں تم دیکھ ہی لوگے خود کو

راہ میں آئینہ خانے ہیں بہت

تیرا اندازِ نظر کہتا ہے

ہمیں دھوکے ابھی کھانے ہیں بہت

دل ابھی اور بھی ویراں ہوں گے

شہر ابھی اور بسانے ہیں بہت

ذکرِ دشواریِ منزل ہی کیا

نہ چلیں ہم تو بہانے ہیں بہت

دلِ بے تاب لیے پھرتا ہے

ورنہ اپنے تو ٹھکانے ہیں بہت

جا نہ ویرانیِ دل پر باقی

اسی صحرا میں خزانے ہیں بہت

شاعر: باقی صدیقی

(شعری مجموعہ:کتنی دیر چراغ جلا )

Dasht   Halaat    K    Chhaanay    Hen   Bahut

Ham    Nay    Daaway   Tiray    Maanay    Hen   Bahut

Kahen   Tum    Dekh   Hi    Lo  Gay   Khud  Ko

Raah   Men    Aaina     Khaanay    Hen   Bahut

Tera    Andaaz -e- Nazar    Kehta   Hay

Hamen    Dhokay    Abhi    Khaanay    Hen   Bahut

Dil     Abhi    Aor    Bhi    Weraan    Ho   Gay

Shehr    Abhi    Aor    Basaanay    Hen   Bahut

Zikr -e- Dushwaari-e- Manzil     Hi   Kaya

Na     Chalen    Ham    To    Bahaanay   Hen   Bahut

Dil  -e- Betaab    Liay    Phirta   Hay

Warna    Aapnay   To   Thikaanay    Hen    Bahut

Ja    Na   Weraani -e- Dil    Par   BAQI

Isi    Sehraa    Men    Khazaanay    Hen   Bahut

Poet: Baqi Siddiqui

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -