اپنی تنہائی پہ مر جانا پڑا | باقی صدیقی |

اپنی تنہائی پہ مر جانا پڑا | باقی صدیقی |
اپنی تنہائی پہ مر جانا پڑا | باقی صدیقی |

  

اپنی تنہائی پہ مر جانا پڑا

راہ میں کیسا یہ ویرانہ پڑا

کس طرف سے آئی تھی تیری صدا

ہر طرف تکنا پڑا، جانا پڑا

زندگی ہے، شورشیں ہی شورشیں

خود کو اکثر ڈھونڈ کر لانا پڑا

تیری رحمت سے ہوئے سب میرے کام

شکر ہے دامن نہ پھیلانا پڑا

کوئی دل کی بات کیا کہنے لگے

اپنا اک اک لفظ دہرانا پڑا

راستے میں اس قدر تھے حادثات

ہر قدم پھر دل کو سمجھانا پڑا

زندگی جیسے اسی کا نام ہے

اس طرح دھوکا کبھی کھانا پڑا

ہے کلی بے تاب کھلنے کے لئے

اور اگر کھلتے ہی مرجھانا پڑا

زندگی کا راز پانے کے لئے

زندگی کی راہ میں آنا پڑا

راستے سے اس قدر تھے بے خبر

مل گیا جو اس کو ٹھہرانا پڑا

دوستوں کی بے رُخی باقیؔ نہ پوچھ

دشمنوں میں دل کو بہلانا پڑا

شاعر: باقی صدیقی

(شعری مجموعہ:کتنی دیر چراغ جلا )

Apni   Tanhaai    Pe    Mar    Jaana   Parra

Raah    Men    Kaisa    Yeh    Weraana   Parra

Kiss    Taraf    Say   Aaai   Thi    Teri   Sadaa

Har    Taraf    Takna    Parra  ,    Jaana   Parra

Zindagi    Hay    Shorshen    Hi   Shorshen

Khud    Ko    Aksar    Dhoond    Kar    Laana   Parra

Teri    Rehmat    Say    Huay    Sab    Meray   Kaam

Shukr    Hay    Daaman    Na    Philaana    Parra

Koi    Dil    Ki    Baat    Kaya    Kehnay   Lagay

Apna    Ik    Ik    Lafz     Dohraana    Parra

Raastay    Men    Iss    Qadar    Thay   Haadsaat

Har    Qadam    Par    Dil    Ko    Samjhaana   Parra

Zindagi    Jaisay    Usi   Ka    Naam   Hay

Iss   Tarah    Dhoka    Kabhi   Khaana   Parra

Hay   Kali   Betaab   Khilnay   K   Liay

Aor    Agar   Khiltay   Hi   Murjhaana   Parra

Zindagi    Ka    Rraaz    Paanay   K   Liay

Zindagi   Ki   Raah   Men    Aana   Parra

Raastay    Say   Iss   Qadar   Thay   Bekhabar

Mill   Gaya   Jo   Uss   Ko   Thehraana   Parra

Doston   Ki   Be   Rukhi    BAQI    Na   Poochh

Dushmanon    Men    Dil    Ko    Behlaana   Parra

Poet: Baqi   Siddiqui

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -