یاد آتا ہے سماں مجھ کو خود آرائی کا  | بسمل الہٰ آبادی |

یاد آتا ہے سماں مجھ کو خود آرائی کا  | بسمل الہٰ آبادی |
یاد آتا ہے سماں مجھ کو خود آرائی کا  | بسمل الہٰ آبادی |

  

یاد آتا ہے سماں مجھ کو خود آرائی کا 

چاندنی رات میں عالم تری انگڑائی کا 

آئنہ آئنہ رویوں کو یہ دیتا ہے سبق 

کچھ سمجھ بوجھ کے دعویٰ کرو یکتائی کا 

اور بھی جوش بڑھا ہو گئیں موجیں بے تاب 

عکس دریا میں پڑا جب تری انگڑائی کا 

میرے دل میں مری آنکھوں میں ہیں تیری شکلیں 

زیب دیتا نہیں دعویٰ تجھے یکتائی کا 

دل ہوا زیر و زبر آہ بھی ہم کر نہ سکے 

رہ گئے دیکھ کے نقشہ تری انگڑائی کا 

میں قفس میں ہوں گلستاں میں خزاں ہو کہ بہار

ذکر مجھ سے نہ کرے کوئی گئی آئی کا

تم بلاتے تھے جسے پیار سے بسمل کہہ کر

آج اُٹھتا ہے جنازہ اُسی شیدائی کا

شاعر: بسمل الہٰ آبادی

(شعری مجموعہ:جذباتِ بسمل،سالِ اشاعت،1932)

Yaad    Aat    Hay    Samaan   Tteri    Khud    Araai   Ka

Chaandni    Raat    Men    Aalam   Teri    Angarraai   Ka

Aaina    Aaina    Rawayyon    Ko    Yeh    Deta    Hay  Sabaq

Kuch    Samjh    Boojh    K    Karo    Dawaa    Yaktaai   Ka

Aor    Bhi    Josh    Barrha    Ho    Gaen    Maojen   Betaab

Aks    Darya    Men    Parra    Jab    Tiri    Angarraai   Ka

Meray    Dil    Men    Miri    Aankhon    Men    Hen    Teri    Shaklen

Zaib    Deta    Nahen    Dawaa    Tujhay    Yaktaai   Ka

Dil    Hua    Zer-o- Zabar    Aah    Bhi    Ham   Kar    Nahen   Saktay

Reh    Gaey    Dekh    K    Naqsha   Tiri    Angarraai   Ka

Main    Qafass    Men    Hun    Gulistaan   Men   Khizaan   Ho   Keh   Bahaar

Zikr   Mujh   Say   Na    Karay   Koi    Gai   Aaai   Ka

Tum    Bulaatay    Thay    Jisay    Payaar   Say    BISMIL   Keh   Kar

Aaj    Uthta    Hay  Janaaza    Usi    Shaidaai   Ka

Poet: Bismil Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -