جو نہ کرنا تھا کیا جو کچھ نہ ہونا تھا ہوا  | بسمل الہٰ آبادی |

جو نہ کرنا تھا کیا جو کچھ نہ ہونا تھا ہوا  | بسمل الہٰ آبادی |
جو نہ کرنا تھا کیا جو کچھ نہ ہونا تھا ہوا  | بسمل الہٰ آبادی |

  

جو نہ کرنا تھا کیا جو کچھ نہ ہونا تھا ہوا 

چار دن کی زندگی میں کیا کہیں کیا کیا ہوا 

یہ سمجھ کر ہم نہیں کہتے کسی سے راز دل 

اس طرف نکلا زباں سے اس طرف چرچا ہوا 

بھر کے ٹھنڈی سانس لیں بیمار نے جب کروٹیں 

وہ کلیجہ تھام کر کہنے لگے یہ کیا ہوا 

سنیے سنیے آتش غم سے ہوئے ہم جل کے خاک 

کہیے کہیے اب کلیجہ آپ کا ٹھنڈا ہوا 

میرے چہرے سے عیاں ہے دیکھ لو پہچان لو 

یہ نہ پوچھو دل کا عالم دل کا نقشہ کیا ہوا 

شاعر: بسمل الہٰ آبادی

(شعری مجموعہ:جذباتِ بسمل،سالِ اشاعت،1932)

Jo    Na    Karna   Tha    Kia    Jo   Na     Hona    Tha    Hua

Chaar    Din    Ki    Zindagi    Men   Kaya    Kahen     Kaya    Kaya   Hua

Yeh     Samajh    Kar    Ham    Nahen      Kehtay    Kisi     Say     Raaz-e-Dil

Iss    Taraf     Nikla     Zubaan     Say    Uss    Taraff    Charcha    Hua

Bhar    K    Thandi     Saans   Len     Bemaar    Nay    Jab    Karwatten

Wo    Kalaija    Thaam    Kar    Kehnay    Lagay    Yeh    Kaya   Hua

Suniay    Suniay    Aatish -e- Gham    Say    Huay    Ham    Jall    K   Khaak

Kahiay    Kahiay    Ab    Kalaija    Aap    Ka    Thanda   Hua

Meray     Chehray     Say    Ayaan    Hay    Dekh    Lo    Pehchaan   Lo

Yeh    Na    Poochho   Dil   Ka     Aalam   Dil    Ka    Naqsha    Kaya    Hua

Poet: Bismil    Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -