نہ رہے تم جو ہمارے تو سہارا نہ رہا  | بسمل الہٰ آبادی |

نہ رہے تم جو ہمارے تو سہارا نہ رہا  | بسمل الہٰ آبادی |
نہ رہے تم جو ہمارے تو سہارا نہ رہا  | بسمل الہٰ آبادی |

  

نہ رہے تم جو ہمارے تو سہارا نہ رہا 

کوئی دنیائے محبت میں ہمارا نہ رہا 

اب کوئی اور زمانے میں سہارا نہ رہا 

جس کو کہتے تھے ہمارا ہے ہمارا نہ رہا 

دے دیا حضرت عیسیٰ نے اسے صاف جواب 

تیرے بیمار کا اب کوئی سہارا نہ رہا 

کیا کہیں حال زمانے کا خلاصہ یہ ہے 

تم ہمارے نہ رہے کوئی ہمارا نہ رہا 

کیا کہوں انجمنِ ناز کا حال اے بسملؔ 

سب کے چرچے رہے بس ذکر تمہارا نہ رہا 

شاعر:بسمل الہٰ آبادی

(شعری مجموعہ:جذباتِ بسمل،سالِ اشاعت،1932)

Na    Rahay    Tum    Jo    Hamaaray   To    Sahaara   Na    Raha

Koi    Dunya-e- Muhabbat    Men    Hamaara    Na    Raha

Ab    Koi    Aor   Zamaanay    Men   Sahaara    Na     Raha

Jiss    Ko   Kehtay    Thay    Hamera    Hay    Hamaara   Na    Raha

Day    Dia    HAZRAT-e- EESA    Nay    Usay    Saaf    Jawaab

Teray    Bemaar    Ka    Ab    Koi    Sahaara   Na    Raha

Kay    Kahen    Haal    Zamaanay    Ka    Khulaasa    Yeh   Hay

Tum    Hamaaray    Na    Rahay    Koi    Hamaara    Na    Raha

Kaya    Kahun     Anjuman -e- Naaz     Ka   Haal   Ay    BISMIL

Sab    K    Charchay     Rahay    Bass     Zikr    Tumhaara   Na    Raha

Poet: Bismil    Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -