دل کی جو آگ تھی کم اس کو بھی ہونے نہ دیا  | بسمل الہٰ آبادی |

دل کی جو آگ تھی کم اس کو بھی ہونے نہ دیا  | بسمل الہٰ آبادی |
دل کی جو آگ تھی کم اس کو بھی ہونے نہ دیا  | بسمل الہٰ آبادی |

  

دل کی جو آگ تھی کم اس کو بھی ہونے نہ دیا 

ہم تو روتے تھے مگر آپ نے رونے نہ دیا 

شمع کیوں پردۂ فانوس میں چھپ جاتی ہے 

اس نئے پروانے کو قربان بھی ہونے نہ دیا 

یادِ دلبر میں کبھی اے دلِ مضطر  تو نے 

ہم کو چپ چاپ کہیں بیٹھ کے رونے نہ دیا 

آشیاں کا تو کوئی ذکر ہے کیا اے صیاد 

جمع تنکوں کو کبھی برق نے ہونے نہ دیا 

آستیں آنکھوں پر اس شوخ نے رکھ دی بسملؔ 

رو رہا تھا مجھے کس واسطے رونے نہ دیا 

شاعر: بسمل الہٰ آبادی

(شعری مجموعہ:جذباتِ بسمل،سالِ اشاعت،1932)

Dil    Ki    Jo    Aag    Thi    Kam    Uss    Ko   Bhi    Honay    Na   Dia

Ham   To    Rotay   Thay    Magar    Aap    Nay    Ronay   Na  Dia

Shama    Kiun     Parda -e- Fanoos    Men    Chhup   Jaati   Hay

Is    Naaey    Parwaanay    Ko    Qurbaan    Bhi    Honay    Na   Dia

Yaad-e- Dilbar    Men    Kabhi    Ay     Dil-e- Muztir    Tu    Nay

Ham    Ko    Chup    Chaap    Kahen    Baith    K    Ronay    Na   Dia

Ashiyaan    Ka    To    Koi    Zikr    Hay    Kaya    Ay   Sayyaad

Jama    Tinkon    Ko    Kabhi    Barq   Nay    Honay    Na   Dia

Aasteen    Aankhon    Par    Uss   Shokh    Nay    Rakh    Di    BISMIL

Ro     Raha   Tha    Mujhay    Kiss      Waastay    Ronay    Na    Dia

Poet: Bismil   Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -