قابلِ شرح مرا حالِ دلِ زار نہ تھا  | بسمل الہٰ آبادی |

قابلِ شرح مرا حالِ دلِ زار نہ تھا  | بسمل الہٰ آبادی |
قابلِ شرح مرا حالِ دلِ زار نہ تھا  | بسمل الہٰ آبادی |

  

قابلِ شرح مرا حالِ دلِ زار نہ تھا 

سننے والے تو بہت تھے کوئی غم خوار نہ تھا 

اب وہ جینے کے لئے سوچ رہا ہے تدبیر 

اپنے ہاتھوں جسے مرنا کبھی دشوار نہ تھا 

مجھ سے پوچھو تو قضا اس کی ہے موت اس کی ہے 

دوشِ احباب پہ جو  مر کے گراں بار نہ تھا 

چنتے تھے باغ میں آ   آ     کر انہیں اہلِ جنوں 

آشیاں کا مرے تنکا کوئی بے کار نہ تھا 

یہ ہمیں نے تو محبت کی نکالیں رسمیں 

آپ پر مرنے کو پہلے کوئی تیار نہ تھا 

دامِ صیاد میں آزاد رہا شکوۂ غم 

میں گرفتار تھا لیکن یہ گرفتار نہ تھا 

اب انہیں سامنے آنے میں ہے عذر اے بسملؔ 

ملنے جلنے سے جنہیں پیشتر انکار نہ تھا 

شاعر: بسمل الہٰ آبادی

(شعری مجموعہ:جذباتِ بسمل،سالِ اشاعت،1932)

 Qaabil -e - Sharah    Mira     Daal-e -Dil -e- Zaar     Na   Tha  

Sunnay   Waalay    To    Bahut    Thay    Koi    Gham   Khaar    Na   Tha

Ab    Wo     Jeenay    K     Liay    Soch    Raha    Hay   Tadbeer

Apnay    Haathon    Jisay    Marna   Kabhi    Dushwaar    Na   Tha

Mujh    Say    Poochho    To    Qaza    Uss    Ki    Hay    Maot    Uss    Ki   Hay

Dosh -e  -Ahbaab    Pe    Jo    Mar   K    Giraan    Baar   Na   Tha

Chuntay    Thay    Baagh    Men    Aa    Aa    Kar   Unhen   Ehl-e- Junoon

Aashiyaan    Ka    Miray    Tinka    Koi    Bekaar    Na   Tha

Yeh    Hameem    Nay   To    Muhabbat    Ki    Nikaleen    Rasmen

Aap    Par    Marnay    Ko    Pehlay    Koi    Tayyaar    Na   Tha

Daam -e- Sayyaad    Men    Azaad    Raha    Shikwa-e- Gham

Main    Giriftaar    Tha     Lekin    Yeh    Giriftaar    Na   Tha

Ab    Unhen    Saamnay     Aanay    Men   Hay   Uzr    Ay    BISMIL

Milnay     Julnay    Say    Jinhen     Paishtar     Inkaar    Na    Tha

Poet: Bismil Allahabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -