چپ چاپ سلگتا ہے دیا تم بھی تو دیکھو  | بشر نواز |

چپ چاپ سلگتا ہے دیا تم بھی تو دیکھو  | بشر نواز |
چپ چاپ سلگتا ہے دیا تم بھی تو دیکھو  | بشر نواز |

  

چپ چاپ سلگتا ہے دیا تم بھی تو دیکھو 

کس درد کو کہتے ہیں وفا تم بھی تو دیکھو 

مہتاب بکف رات کسے ڈھونڈ رہی ہے 

کچھ دور, چلو آؤ ذرا تم بھی تو دیکھو 

کس طرح کناروں کو ہے سینے سے لگائے 

ٹھہرے ہوئے پانی کی ادا تم بھی تو دیکھو 

کچھ رات گئے روز جو آتی ہے فضا سے 

کس ڈوبتے دل کی ہے صدا تم بھی تو دیکھو

ہر ہنستے ہوئے پھول سے رشتہ ہے خزاں کا 

ہر دل میں ہے اک زخم چھپا تم بھی تو دیکھو 

کیوں سانس ہوئی جاتی ہے کچھ اور بھی گہری

کیوں ٹوٹ چلے بند قبا تم بھی تو دیکھو 

یادوں کے سمن زار سے آئی ہوئی خوشبو 

دامن میں چھپا لائی ہے کیا تم بھی تو دیکھو 

شاعر: بشر نواز

( شعری مجموعہ: رائیگاں ،سالِ اشاعت،1972)

Chup     Chaap    Sulagta    Hay    Diya    Tum    Bhi    To    Dekho

Kiss    Dard    Ko    Kehtay    Hen    Wafa  Tum    Bhi    To    Dekho

Mehtaab    Bakaff     Raat    Kisay    Dhoond    Rahi   Hay

Kuchh    Door     Chalo   ,    Aao    Zaraa   Tum    Bhi    To    Dekho

Kiss    Tarah     Kinaaron     Ko    Hay    Seenay    Say   Lagaaey

Thehray    Huay    Paani    Ki     Adaa  Tum    Bhi    To    Dekho

Kuch    Raat    Dhalay    Roz    Jo   Aati    Hay    Fazaa   Say

Kiss    Doobtay     Dil   Ki   Hay    sadaa   Tum    Bhi    To    Dekho

Kiun    Saans    Hui    Jaati    Hay     Kuch    Aor   Bhi   Gehri

Kiun    Toot    Chalay   Bband-e-  Qabaa   Tum    Bhi    To    Dekho

Yaadon    K    Saman    Zaar    Say   Aai    Hui   Khushbu

Daaman    Men     Chupaa    Laai    Hay    Kaya  Tum    Bhi    To    Dekho

Poet: Bashar Nawaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -