کوئی صنم تو ہو کوئی اپنا خدا تو ہو  | بشر نواز |

کوئی صنم تو ہو کوئی اپنا خدا تو ہو  | بشر نواز |
کوئی صنم تو ہو کوئی اپنا خدا تو ہو  | بشر نواز |

  

کوئی صنم تو ہو کوئی اپنا خدا تو ہو 

اس دشتِ بے کسی میں کوئی آسرا تو ہو 

کچھ دُھندلے دُھندلے خواب ہیں کچھ کانپتے چراغ 

زادِ سفر یہی ہے کچھ اس کے سوا تو ہو 

ہر چہرہ مصلحت کے نقابوں میں کھو  گیا 

مل بیٹھیں کس کے ساتھ کوئی آشنا تو ہو 

خاموش پتھروں کی طرح کیوں ہوا ہے شہر 

دھڑکن دلوں کی گر نہیں آوازِ پا تو ہو 

باقی ہے ایک درد کا رشتہ سو وہ بھی اب 

کس سےنبھائیے ہم کوئی درد آشنا تو ہو 

سورج ہی جب نہ چمکے تو پگھلے گی برف کیا 

بن جائیں وہ بھی موم مگر دل دُکھا تو ہو 

شاعر: بشر نواز

( شعری مجموعہ: رائیگاں ،سالِ اشاعت،1972)

Koi     Sanam    To    Ho    Koi    Apna    Khuda   To   Ho

Iss    Daor -e- Bekasi    Men    Koi     Aasra To   Ho

Kuch     Dhundlay     Dhundlay    Khaab    Hen    Kuch    Kaanptay   Charaagh

Zaad-e-Safar    Yahi    Hay   Kuch    Iss   K   Siwaa To   Ho

Har    Chehra    Maslihat    K     Naqaabon    Men    Kho   Gaya

٘Mill    Bethen    Kiss    K     Saath    Koi    Aashna  To   Ho

Khamosh    Pathron    Ki    Tarah    Kiun   Hua    Hay   Shehr

Dharrkan    Dilon    Ki    Gar    Nahen    Aawaaz-e -Paa   To   Ho

Baaqi    Hay    Aik    Dard    Ka    Rishta    So  Wo    Bhi   Ab

Kiss    Say    Nibhaaiay    Koi    Dard    Aashna    To   Ho

Sooraj    Hi    Jab    Na    Chamkay    To    Pighlay    Gi   Barf    Kaya

Ban    Jaaen    Wo    Bhi    Mom    Magar    Dil    Dukha  To    Ho

Poet: Bashar Nawaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -