ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا  | بشر نواز |

ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا  | بشر نواز |
ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا  | بشر نواز |

  

ربط ہر بزم سے ٹوٹے تری محفل کے سوا 

رنجشیں سب کی گوارا ہیں ترے دل کے سوا 

صرف آواز سے پہچان لیں ہم تو اُن کو

یہ کھنک اور کہاں لہجۂ قاتل کے سوا

ایسے پہلو میں سما جاؤ کہ جیسے دل ہو 

چین ملتا ہے کہاں موج کو ساحل کے سوا 

چیخ ٹکرا کے پہاڑوں سے پلٹ آتی ہے 

کون سہتا ہے بھلا وار مقابل کے سوا 

خشک پتوں سے چھڑا لیتی ہیں شاخیں دامن 

کس نے یادوں سے نبھائی ہے یہاں دل کے سوا 

شاعر: بشر نواز

( شعری مجموعہ: رائیگاں ،سالِ اشاعت،1972)

Rabt    Har    Bazm    Say    Tootay    Teri   Nehfill    K    Siwaa

Ranjashain    Sab    Ki    Gawaara    Hen    Teray    Dil   K   Siwaa

Sirf    Awaaz    Say    Pechaan    Len   Ham   To   Un   Ko

Yeh     Khanak    Aor    Kahan    Lehja -e- Qaatil    K   Siwaa

Aisay    Pehloo    Men     Samaa     Jaao    Jesay    Dil    Ho

Chain    Mitla     Hay     Kahan    Maoj     Ko   Saahil    K   Siwaa

   Cheekh    Takraa    K     Pahaarron    Say    Palatt    Aaati   Hay

Kon    Sehta    Hay     Bhala    Waar    Muqaabil    K   Siwaa

Khushk    Patton    Say    Churraa    Leti    Hen    Shaakhen    Daaman

Kiss    Nay    Yaadon    Say    Nibhaai   Hay    Yahaan    Dil    K   Siwaa

Poet: Bashar   Nawaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -