ا س شہر کی گلیوں میں چرچے ہیں مرے دل کے | بشر نواز |

ا س شہر کی گلیوں میں چرچے ہیں مرے دل کے | بشر نواز |
ا س شہر کی گلیوں میں چرچے ہیں مرے دل کے | بشر نواز |

  

ا س شہر کی گلیوں میں چرچے ہیں مرے دل کے

افسانہ در افسانہ قصے ہیں مرے دل

کس درد کے چہرے سے اُلٹوں میں نقاب آخر

ہر درد سے انجانے رشتے ہیں مرے دل

بھٹکے ہوئے خوابوں کو ڈھونڈوں تو کہاں ڈھونڈوں

رستے تو کئی دن سے سونے ہیں مرے دل

اک قیدِ مسلسل ہے اس شوخ کی چاہت بھی

اب خود مری راہوں پر پہرے ہیں مرے دل

کیفیتیں کچھ کچھ تو باتوں سے ہوئیں ظاہر

کچھ رنگ جبیں سے بھی جھلکے ہیں مرے دل

شاعر: بشر نواز

( شعری مجموعہ: رائیگاں ،سالِ اشاعت،1972)

Iss    Shehr    Ki    Galiyon    Men    Charchay    Hen    Miray    Dil    K 

Afsaana      Dar    Afsaana    Qissay    Hen    Miray  Dil    K

Kiss    Dard    K    Chehray    Say   Ultun    Main   Naqaab   Aakhir

Har   Dard   Say   Anjaanay   Rishtay    Hen   Miray Dil    K

Bhattkay   Huay   Khaabon   Ko   Dhoondun   To    Kahan   Dhoondun

Rastay   To    Kai    Din    Say    Soonay    Hen    Miray Dil    K

Ik    Qaid -e- Musalsal   Hay    Iss    Shokh    Ki    Chaahat   Bhi

Ab   Khud    Miri    Raahon    Par    Pehray    Hen    Miray  Dil    K

Kaifiyaten     Kuch    Kuch    To     Baaton    Say    Huen    Zaahir

Kuch    Rang     Jabeen    Say    Bhi    Jhalkay    Hen    Miray  Dil    K

Poet: Bashar    Nawaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -