رات کے سینے پہ اک شمع جلا کر دیکھیں | بشر نواز |

رات کے سینے پہ اک شمع جلا کر دیکھیں | بشر نواز |
رات کے سینے پہ اک شمع جلا کر دیکھیں | بشر نواز |

  

رات کے سینے پہ اک شمع جلا کر دیکھیں

اُس زُلفوں میں کوئی پھول سجا کر دیکھیں

کیسے پی جاتی ہیں تاریکیاں منظر منظر

آج شمعوں کو سرِ شام بجھا کر دیکھیں

کیا عجب ہے کہ ہمیں جیسے یہاں اور بھی ہوں

اِن اندھیروں میں اِک آواز لگا کر دیکھیں

قرب کی روشنی بن جاتی ہے اکثر پردہ

خوبیاں اُس کی اُسے دُور بٹھاکر دیکھیں

تاب سچائی کی لاتی ہیں نگاہیں کس کی

آؤ خوابوں کی رِداؤں کو ہٹا کر دیکھیں

شاعر: بشر نواز

( شعری مجموعہ: رائیگاں ،سالِ اشاعت،1972)

Raat    K   Seenay    Pe     Ik    Shama    Jalaa    Kar   Dekhen

Uss    Ki    Zulfon   Men    Koi    Phool    Sajaa    Kar   Dekhen

Kaisy    Pi     Jaati    Hen    Taareekiyaan    Manzar    Manzar

Aaj    Shamon    Ko     Sar-e- Shaam    Bujhaa    Kar    Dekhen

kaya     Ajab    Hay    Keh    Hameen    Jaisay    Yahaan    Aor    Bhi   Hon

In    Adndhairon    Men    Ik     Awaaz    Lagaa    Kar    Dekhen

  Qurb     Ki    Raoshni    Ban    Jaati    Hay    Aksar    Parda

Khoobiyaan    Uss    Ki     Usay   Door    Bithaa  Kar    Dekhen

Taab     Sachaai      Ki    Laaati    Hen      Nigaahen    Kiss    Ki

Aaao     Khaabon    Ki     Ridaaon    Ko     Hataa    Kar     Dekhen

Poet: Bashar   Nawaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -