کوئی نہ جان سکا وہ کہاں سے آیا تھا | بشیر بدر |

کوئی نہ جان سکا وہ کہاں سے آیا تھا | بشیر بدر |
کوئی نہ جان سکا وہ کہاں سے آیا تھا | بشیر بدر |

  

کوئی نہ جان سکا وہ کہاں سے آیا تھا

اور اس نے دھوپ سے بادل کو کیوں ملایا تھا

یہ بات شائد لوگوں کو پسند آئی نہیں

مکان چھوٹا تھا لیکن بہت سجایا تھا

وہ اب وہاں سے جہاں راستے نہیں جاتے

میں جس کے ساتھ یہاں پچھلے سال آیا تھا

سنا ہے اس پہ چہکنے لگے پرندے بھی

وہ ایک پودا جو ہم نے کبھی لگایا تھا

چراغ ڈوب گئے کپکپائے ہونٹوں پر

کسی کا ساتھ ہمارے لبوں تک آیا تھا

بدن کو چھوڑ کے جانا ہے آسمان کی طرف

سمندروں نے ہمیں یہ سبق پڑھایا تھا

تمام عمر مرا دم اسی دُھوئیں میں گھٹا

وہ اک چراغ تھا میں نے اسے بجھایا تھا

شاعر: بشیر بدر

( شعری مجموعہ: آس ،سالِ اشاعت،1993)

Koi    Na    Jaan    Saka    Wo    Kahan    Say    Aaya   Tha

Aor    Uss    Nay    Dhoop    Say    Baadal    Kiun    Milaaya   Tha

Yeh    Baat    Shaayad     Logon    Ko    Pasand   Aai   Nahen 

Makaan    Chotta    Tha    Lekin    Bahut    Sajaaya    Tha

Wo    Ab    Wahan    Hay    Jahan    Raastay    Nahen   Jaatay

Main     Jiss    K    Saath     Yahan    Pichlay     Saal     Aaya    Tha

Suna     Hay     Uss     Pe      Chahknay     Lagay     Parinday     Bhi

Wo      Aik      Paoda     Jo     Ham     Nay    Kabhi     Lagaaya    Tha

Charaagh     Doob      Gaey      Kapkapaaey      Honton    Par

Kisi     Ka     Haath      Hamaaray     Labon      Tak     Aaya    Tha

Badan     Ko       Chorr     K     Jaana      Hay     Aaasmaan    Ki     Taraff

Samundaron      Nay     Hamen  Yeh     Sabaq       Parrhaaya      Tha

Tamaam    Umr     Mira     Dam     Usi      Dhuen     Men     Ghutta

Wo     Ik       Charaagh     Tha     Main      Nay      Usay     Bujhaaya   Tha

Poet: Bashir   Badr

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -