اقتصادی راہداری منصوبہ مامور پر چینی کارکنوں کی سیکورٹی کیلئے خصوصی فورس تشکیل دے دی،احسن اقبال

اقتصادی راہداری منصوبہ مامور پر چینی کارکنوں کی سیکورٹی کیلئے خصوصی فورس ...

 اسلام آباد(اے این این ) وفاقی وزیر برآئے منصوبہ بندی وترقی احسن اقبال نے کہا ہے کہ پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبے پر مامور چینی کارکنوں کے تحفظ کیلئے خصوصی سکیورٹی فورس تشکیل دے دی ، وزیراعظم نواز شریف کے حکم پر بننے والی خصوصی فورس کی تربیت فوج کی زیرنگرانی کی جا رہی ہے جورینجرز کی طرز پر کام کریگی اور اسکا واحد مینڈیٹ پاکستان میں ترقیاتی منصوبوں پر کام کرنیوالے چینی کارکنوں کو تحفظ فراہم کرنا ہو گا۔طانوی نشریاتی ادارے کودیئے گئے انٹرویومیں احسن اقبال نے اس تاثر کی تردید کرتے کہا کہ اقتصادی راہداری کے اس حصے پر پہلے کام مکمل کیا جائے گا جو بلوچستان اور خیبر پختونخوا سے گزرتا ہے،انہوں نے کہا کہ پاکستان چین اقتصادی راہداری منصوبے پرتعمیراتی کام شروع ہو چکا ہے اور گوادر کو خضدار، کوئٹہ اور ڈیرہ اسماعیل خان سے ملانے والی سڑک اگلے سال تک مکمل کر لی جائے گی۔بر۔ انہوں نے کہاکہ گوادر کو خضدار سے ملانے والی سڑک پر تعمیر کے کام کا آغاز ہو چکا ہے۔ یہ سڑک کوئٹہ اور ڈیرہ اسماعیل خان سے ہوتی ہوئی شاہراہ قراقرم تک پہنچے گی۔ اور ہمارا ارادہ ہے کہ اس سڑک کو اگلے سال کے آخر تک مکمل کر لیا جائے۔احسن اقبال نے کہا کہ بعض لوگ پاک چین اقتصادی راہداری کے منصوبے کو صرف ایک سڑک سمجھ کر بے بنیاد باتیں کر رہے ہیں۔ یہ راہداری منصوبہ صرف ایک سڑک کا نام نہیں ہے بلکہ یہ ایک فریم ورک ہے، یہ بہت سے ترقیاتی منصوبوں کا مجموعہ ہے جس میں بجلی گھر، صنعتی زون، ثقافتی منصوبے اور حتی کہ ٹیلی وژن اور ریڈیو اسٹیشن تک شامل ہیں۔ احسن اقبال نے کہا کہ گوادر پاکستان کے اندر اور باہر مختلف منڈیوں کے لیے ایک ماڈرن بندرگاہ کے طور پر کام کرے گی، اس لیے اسے ایک سے زیادہ راستوں کے ذریعے ملکی اور علاقائی منڈیوں سے جوڑا جائے گا۔ مغربی روٹ بلوچستان اور خیبر پختونخوا سے گزرے گا، مرکزی روٹ سکھر اور انڈس ہائی وے کو قرا قرم ہائی وے سے جوڑے گا اور مشرقی روٹ اسلام آباد سے فیصل آباد اور ملتان موٹر وے کو سکھر کے راستے گوادر تک لے جائے گا۔ احسن اقبال نے کہا کہ سب سے پہلے مغربی روٹ اس کے دو سال بعد مشرقی روٹ اور سب سے آخر میں مرکزی روٹ پر کام مکمل کیا جائے گا۔ احسن اقبال

مزید : صفحہ آخر