بحیرہ روم میں تارکین وطن کے مسئلہ سے نمٹنے ، سمگلرز کی کشتیاں تباہ کرنے کے اختیارات فوج کو دیئے جائیں گے:یورپی یونین

بحیرہ روم میں تارکین وطن کے مسئلہ سے نمٹنے ، سمگلرز کی کشتیاں تباہ کرنے کے ...
بحیرہ روم میں تارکین وطن کے مسئلہ سے نمٹنے ، سمگلرز کی کشتیاں تباہ کرنے کے اختیارات فوج کو دیئے جائیں گے:یورپی یونین

  

لکسمبرگ (مانیٹرنگ ڈیسک) یورپی یونین نے کہا ہے کہ بحیرہ روم میں تارکین وطن کے مسئلہ سے نمٹنے کےلئے ٹراٹن پٹرولنگ سروس بہتر بنانے اور سمگلروں کی کشتیاں تباہ کرنے کے اختیارات فوج کو دیئے جائیں گے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق جرمنی کے شہر لکسمبرگ میں یورپی یونین کے منعقدہ اجلاس میں دس نکاتی پیکج کا اعلان کرتے ہوئے یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ فیدریکا موگیرینی نے کہا کہ مذاکرات کے نتیجے میں سامنے آیا ہے کہ غیر ملکی تارکین وطن کے معاملے کے حل کےلئے سیاسی عزم اور کوششیں تیز کرنا ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ یورپی سطح پر انسانی سمگلنگ سے نمٹنے کےلئے مکمل یورپی سطح پر متحد ہو رہے ہیں۔ اس اقدامات میں فرنٹ ایکس کےلئے مالیاتی وسائل میں اضافے کے اقدامات بھی ہیں جو یورپی یونین کے بحیرہ روم کے بچاﺅ کی سروس ٹراٹن چلاتی ہے اور ٹراٹن کے آپریشنل علاقے کو بڑھانے کے اقامات بھی ہیں۔

خبررساں ایجنسی ’اے پی پی ‘ کے مطابق یورپی یونین کے امور خارجہ کی سربراہ نے کہا کہ سویلین اور فوجی آپریشن جس کے پاس انسانی سمگلروں کی کشتیوں کو تباہ کرنے کا اختیار ہوگا جس کےلئے یورپی کونسل کی منظوری درکار ہے۔ واضح رہے کہ اہم 10 نکات میں تارکین وطن کے انگوٹھوں کے نشانات کا حصول اور ان کے ریکارڈ کی تیاری، یورپی سطح پر تارکین وطن کی بحالی کا منصوبہ جو کہ رضا کارانہ ہوگا۔ واپسی کے سفر کی پیشکش اہم ممالک میں امیگریشن کے تعاون کےلئے اہلکاروں کی تعیناتی شامل ہے۔ موگرینی نے کہا کہ لیبیا میں کارروائی اور سرحدوں کی نگرانی کی بھی ضرورت ہے۔

مزید : بین الاقوامی