پاکستانیوں کی واپسی کیلئے طورخم اور چمن بارڈر ہفتے میں 2مرتبہ کھولنے کا فیصلہ

  پاکستانیوں کی واپسی کیلئے طورخم اور چمن بارڈر ہفتے میں 2مرتبہ کھولنے کا ...

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک،آن لائن) حکومت نے کرونا وائرس کے باعث بیرون ممالک پھنسے پاکستانیوں کی وطن واپسی کیلئے طور خم اور چمن بارڈر کو ہفتے میں 2 دفعہ کھولنے کا فیصلہ کرلیا۔معاون خصوصی برائے قومی سلامتی معید یوسف نے کہا ہے کہ 500 پاکستانی طورخم بارڈر اور 300 چمن بارڈر کے ذریعے لائے جائیں گے، 6 ہزار پاکستانیوں کو مختلف ممالک کے ذریعے اگلے ہفتے تک لانے کا فیصلہ کیا گیا ہے، یو اے ای میں بیروزگار پاکستانیوں کو واپس لانے کیلئے 16 فلائٹس آپریٹ کی جا رہی ہیں، ملیشیا، سنگا پور اور بحرین سے رہا ہونے والے قیدوں کو بھی واپس لایا جائے گا۔معید یوسف کا کہنا تھا افریقہ اور امریکا کیلئے بھی خصوصی فلائٹس کا انتظام کرلیا گیا، بیرون ممالک پھنسے پاکستانیوں کو مختلف کیٹگریز میں تقسیم کر دیا گیا، 35 ہزار سے زائد پاکستانی وطن واپسی کے خواہشمند ہیں، واپسی پر مسافروں کو 48 گھنٹے تک قرنطینہ کیا جائے گا، تمام مسافروں کو ٹیسٹنگ کے مرحلے سے گزرنا ہو گا، ٹیسٹ مثبت آنے پر مسافروں کو ہسپتال میں رکھا جائے گا، پالیسی زمینی راستے سے داخل ہونے والے پاکستانیوں پر بھی لاگو ہوگی۔دوسری جانبکرغزستان میں پھنسے 400 پاکستانی طلبہ نے حکومت سے واپسی کیلئے انتظامات کرنے کا مطالبہ کردیا۔طلبہ نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ ہمیں خصوصی پروازوں کے ذریعے یہاں سے نکالا جائے۔ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے اس حوالے سے کہا کہ ہم کرغزستان میں اپنے طلبہ کے حالات سے آگاہ ہیں، بشکک میں سفارت خانہ ان کے ساتھ رابطے میں ہے اور انہیں براہ راست کھانے پینے اور دیگر اشیا فراہم کیے جارہے ہیں۔

بارڈرز/مطالبہ

مزید :

صفحہ آخر -