جب تک صوبہ نہیں بنتا مسائل برقرار رہیں گے‘ جمشید دستی

جب تک صوبہ نہیں بنتا مسائل برقرار رہیں گے‘ جمشید دستی

  

ملتان (سٹی رپورٹر)جب تک صوبہ نہیں بنے گا، مسئلے حل نہیں ہونگے، احساس پروگرام بے احساس ہے، مستحقین کی اکثریت محروم جبکہ بہت سے صاحب حیثیت نوازے گئے، ان خیالات کا اظہار عوامی راج پارٹی کے سربراہ اور سابق رکن قومی اسمبلی جمشید دستی نے سرائیکستان قومی کونسل کی طرف سے کورونا لاک ڈاؤن آگاہی مہم سرائیکی کتابوں کی تقسیم کے موقع پر کیا۔(بقیہ نمبر29صفحہ6پر)

انہوں نے کہا کہ کتاب سے بڑھ کر کوئی ساتھی نہیں، کورونا لاک ڈاو?ن کے موقع پر کتابوں کی تقسیم بہترین عمل ہے کہ گھر میں بیٹھے ہوئے افراد کتابیں پڑھیں گے، علمی ادبی ماحول پیدا ہوگا اور کتاب دوستی کے عمل کو تقویت ملے گی۔ اس کیلئے میں سرائیکستان قومی کونسل کے صدر ظہور دھریجہ کو خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں اور وسیب کے لئے ان کی خدمات تاریخی حیثیت اختیار کر گئی ہیں۔ جمشید دستی نے کہا کہ کورونا لاک ڈاو?ن کے خاتمے پر ہم لائحہ عمل ترتیب دیں گے اور عید کے بعد سرائیکی صوبے کیلئے جدوجہد شروع کر دیں گے کہ صوبے کے بغیر مسئلے حل نہیں ہوسکتے۔ انہوں نے کہا کہ آج وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی خود کہہ رہے ہیں کہ بڑا کورونا سنٹر ملتان میں ہے جبکہ 6 کورونا لیباٹریوں میں سے ایک بھی سرائیکی خطے کو نہیں ملی۔ میں پوچھتا ہوں اس کا ذمہ دار کون ہے؟ انہوں نے کہا کہ وزیراعظم، وزیراعلیٰ اور دیگر اہم وزراء کا تعلق ہمارے خطے سے ہے مگر سب سے زیادہ استحصال سرائیکی خطے کا ہو رہا ہے۔ کابینہ کے وزیر طارق چیمہ اور دوسرے لوگ وسیب میں تفریق پیدا کر رہے ہیں، ان کا مقصد صوبہ بنوانا نہیں بلکہ صوبے کا کیس خراب کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں بلوچ ہوں مگر سرائیکی خطے میں آ کر ہم سب سرائیکی ہوگئے۔ خطے میں بسنے والے سب ایک ہیں، الیکشن کے موقع پر فراڈ کیا گیا، سو دن میں صوبے کا وعدہ کر کے ووٹ لے لئے، مگر ہم وسیب کے لوگوں کے ساتھ باہر نکلیں گے اور صوبہ لے کر رہیں گے۔ اس موقع پر ظہور دھریجہ نے کہا کہ کورونا اموات میں اضافہ تشویشناک ہے اور یہ شکایات بھی عام ہیں کہ مستحقین کی اکثریت اب بھی محروم ہے جبکہ صاحب حیثیت لوگ امدادی رقم لے گئے۔ ان شکایات کا ازالہ ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے پاس مالی وسائل نہیں لیکن کتابیں موجود ہیں، ہم تقسیم کر رہے ہیں، اسی لحاظ سے جس کے پاس جو کچھ ہے وہ کورونا وبا کے موقع پر تقسیم کرے کہ یہ کائنات کے آغاز سے لیکر آج تک کا ایک ایسا سانحہ ہے جس نے پوری کائنات کو لپیٹ میں لیا ہے تو اس موقع پر فرعون اور قارون بننے والے ہمیشہ کے لئے گالی بن جائیں گے، البتہ جس نے سخاوت کی حاتم طائی کی طرح ان کا نام زندہ رہے گا۔ اس موقع پر جمشید دستی اور ظہور دھریجہ نے آنے والے مہمانوں میں جھوک پبلشرز کی طرف سے سرائیکی کتابوں کے تحائف پیش کئے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -