پاکستان شپنگ پالیسی کا مسودہ کابینہ کو پیش کر دیا، اسٹیٹ بینک کے سگنل کا انتظا ر ہے: علی زیدی

    پاکستان شپنگ پالیسی کا مسودہ کابینہ کو پیش کر دیا، اسٹیٹ بینک کے سگنل کا ...

  

کراچی(اکنامک رپورٹر) وفاقی وزیر بحری امورسیدعلی حیدرزیدی نے کہا ہے کہ چند سال پہلے ہم امن و امان کی صورتحال پر بات کرتے تھے اور آج سب کی توجہ اس جانب مرکوز ہے کہ کس طرح معیشت کو بہتر بنایا جائے۔ یہ بات انہوں نے ایمپلائز فیڈریشن آف پاکستان (ای ایف پی)کے نائب صدر ذکی احمد خان اورچیئرمین ای ایف پی اکنامک کونسل اسماعیل ستارکی سربراہی میں 5رکنی وفد سے ملاقات کے موقع پر کہی۔ وفد میں چیئرمین اکنامک کونسل محمود ارشد،فرقان ریاض اور کورڈینٹر عبداللہ علی خان شامل بھی تھے۔ملاقات میں ورکرز کو اجرت کی ادائیگی کے نظام اور صنعتوں کی بندش پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔وفاقی وزیر بحری امور نے کہاکہ پاکستان شپنگ پالیسی کا حتمی مسودہ کابینہ کو پیش کردیا گیا ہے اور اب منی لانڈرنگ سے بچاؤ کی شقوں کے لیے اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گرین سگنل کا انتظار ہے جن میں جہاز بنانے والوں کے لیے کم ازکم 500ملین روپے اور غیرملکی کرنسی میں تمام ادائیگیاں شامل ہیں۔ انہوں نے وفد کو بتایا کہ حال ہی میں دو نئے جہاز 9فعال جہازوں میں شامل کیے گئے ہیں جو اس وقت اناج، ہائیڈروکاربن، خوردنی تیل اور کوئلہ لے کرجارہے ہیں۔چیئرمین ای ایف پی اکنامک کونسل اسماعیل ستار نے وفاقی وزیر سے ملاقات میں ان کی توجہ نیشنل شپنگ پالیسی نہ ہونے کی جانب مبذول کروائی اور گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ پالیسی نہ ہونے کی وجہ سے پورٹ حکام پاکستان کسٹم ایکٹ پر عمل پیرا نہیں ہو رہے جس سے درآمدکنندگان اور برآمدکنندگان کو درپیش نصف سے زائد مسائل کاجواب نہیں ملتا۔انہوں نے اجلاس میں نشاندہی کی کہ شپنگ کمپنیاں مختلف شرح سے چارجز اور حد سے زیادہ کنٹینرسکیورٹی ڈپازٹ وصول کررہی ہیں۔ نہوں نے تجویز دی کہ ٹرمینل ڈیمرج اور کیریئر ڈی ٹینشن کی مد میں چھوٹ کے دنوں کو مزید4سے10دنوں کے لیے بڑھایا جائے کیونکہ کنٹینر ریلیز ہونے سے پہلے جانچ اورتشخیص میں زیادہ وقت لگتا ہے۔ای ایف پی کے نائب صدر ذکی احمد خان نے صنعتکاروں کے خدشات سے آگاہ کرتے ہوئے علی زیدی پر زور دیا کہ وہ وزیراعظم عمران خان کے ساتھ یہ معاملہ اٹھائیں تاکہ موجودہ حالات کے پیش نظر دیوالیہ پن کا شکار چھوٹے کاروباروں کوبچانے کے لیے اجرت کی ادائیگی کے نئے طریقہ کار کی تشکیل کو تیز کیا جائے کیونکہ تنخواہوں کے علاوہ یوٹیلٹی بلز اور بینکوں کو سود بھی ادا کرنا ہوتا ہے۔انہوں نے ادائیگی کے نظام سے متعلق ایمپلائز فیڈریشن پاکستان کی تجویز کردہ سفارشات وفاقی وزیر کو پیش کرتے ہوئے کہاکہ یہی مناسب وقت ہے کہ کم سے کم 50فیصد تنخواہوں پر سبسڈی دینے کے لیے ورکرز ویلفیئر فنڈز سے رقم کا اجراء کیا جائے۔ انہوں نے وفاقی وزیر پر مداخلت کے لیے زور دیا کہ اس سے پہلے کہ تاخیر ہو اور کاروباری ادارے قانونی چارہ جوئی کے لیے عدالتوں سے رجوع کریں وہ اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ مشاورت کرکے فوری طور پر عملی فیصلے عمل میں لائیں۔ڈائریکٹر ای ایف پی اکنامک کونسل محمود ارشد نے معاشی ترقی میں کے پی ٹی کے اہم کردار کو سراہتے ہوئے کہاکہپاکستان نیشنل شپنگ کارپوریشن کی ازسر نو تشکیل کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہاکہ ملک کی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے اسے خودکفیل بنایا جائے جو بین الاقوامی کمپنیوں کو ادائیگی پر ہر سال 5ارب روپے کے خطیر اخراجات کررہاہے۔انہوں نے وزیر بحری امور کو تجویز دی کہ باہمی فوائد کے لیے جی سی سی ممالک باالخصوص قطر سے سرمایہ کاروں کو پی این ایس سی میں سرمایہ کاری کی دعوت دی جائے۔انہوں نے کچھ ایسے اداروں کی مثال دی جو پاکستان کے جہاز رانی کے شعبے میں سرمایہ کاری کے خواہش مند ہیں۔وزیربحری امور نے ای ایف پی کی اکنامک کونسل کی ریسرچ وڈیولپمنٹ ٹیم کی عمدہ شراکت کا اعتراف کرتے ہوئے کمشنر فشریز کو ہدایت کی کہ وہ ڈیپ سی فشنگ پالیسی کمیٹی میں ای ایف پی کی اکنامک کونسل کو شامل کریں۔

مزید :

صفحہ اول -