کورونا!بھارت سے مسافروں کی آمد پر پابندی!

کورونا!بھارت سے مسافروں کی آمد پر پابندی!

  

پاکستان کورونا کی تیسری لہر سے متاثر ہوا ہے اور متاثرین کی تعداد بھی بڑھی ہے، ہسپتالوں میں گنجائش بھی تھوڑی رہ گئی ہے۔ آئی سی یو میں قریباً تمام بستروں پر مریض ہیں، اور وینٹی لیٹر بھی مصروف ہیں، اِن حالات میں این سی او سی کے حالیہ اجلاس میں جو وفاقی وزیر اسد عمر کی صدارت میں ہوا تمام عوامل پر غور کیا گیا۔اجلاس میں بتایا گیا کہ بھارت میں کورونا کی شدت بہت زیادہ ہو چکی ہے۔ مودی سرکار کی بے حسی سے مریضوں میں اضافہ ہوا،حتیٰ کہ چار ماہ سے بھی زیادہ عرصہ ہو گیا، کسانوں کا احتجاج جاری ہے اور ان کے دھرنے یا جلوسوں میں ایس او پیز کا اختیار کرنا بھی مشکل ہے۔ این سی او سی نے تمام حالات پر غور کے بعد بھارت کو  فہرست(سی) میں شامل کیا اور بھارت سے مسافروں کی آمد دو ہفتے تک روک دی ہے۔ کوئی بھی فرد زمینی یافضائی راستے سے نہیں آ سکے گا، بھارت کی خراب صورتِ حال کے پیش ِ  نظر برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے اپنا دورہئ بھارت ملتوی کر دیا اور بھارت کو بھی ریڈ لسٹ میں شامل کر دیا ہے۔ بھارت میں کورونا سے اموات بھی زیادہ ہوئیں اور پھیلاؤ بھی زیادہ ہے،اِس لئے یہ پابندی ضروری ہو گئی تھی، اجلاس میں نوٹ کیا گیا کہ پاکستان میں بھی تیسری لہر شدید ہے تاہم اب مثبت کیسوں میں معمولی کمی ہوئی ہے، اس کے باوجود احتیاط لازمی ہے۔ این سی او سی کی تجویز اور سفارش پر عمل ضروری ہے کہ روزانہ کی بنیاد پر صورتِ حال کا جائزہ لیا جاتا ہے۔ بھارت سے مسافروں کی آمد پر عارضی پابندی بھی درست ہے، تاہم جن ممالک سے آنے کی اجازت ہے ان کی ہوائی اڈوں اور سرحدوں پر جانچ پڑتال بھی لازم ہے اور حکومت کو پہلے جیسے ٹھوس انتظامات کرنا چاہئیں۔

مزید :

رائے -اداریہ -