15روپے سستی چینی کے نام پر عوام کو بھکا ری بنادیا گیا: لاہور ہائیکورٹ 

15روپے سستی چینی کے نام پر عوام کو بھکا ری بنادیا گیا: لاہور ہائیکورٹ 

  

لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائی کورٹ نے سستی چینی کے نام پر عوام کی تذلیل اور لمبی لمبی لگنے والی لائنوں کا نوٹس لے لیا،عدالت نے برہمی کا اظہارکرتے ہوئے قراردیاکہ 15روپے سستی چینی کے نام پر آپ نے عوام کو بھکاری بنادیا  عدالت نے ہدایت کی کہ حکومت پرچون کی سطح پر چینی کی فراہمی کو یقینی بنائے،عدالت نے رمضان بازاروں، یوٹیلیٹی سٹوروں پر فوری طور پر لائنیں ختم کرکے آج 21اپریل کورپورٹ پیش کرنے کا حکم بھی دیا چینی کی قیمت مقرر کرنے کے خلاف شوگر ملز کی درخواستوں پر سماعت شروع ہوئی تودوران سماعت عدالت نے مقامی سطح پر پرچون کی دکانوں پر چینی کی عدم فراہمی پر پنجاب حکومت پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمار کس دیئے کہ ایک کلو چینی کے لئے شہری پانچ پانچ گھنٹے لمبی لمبی لائنوں میں لگے ہوئے ہیں،تھوڑی ڈگنٹی رہنے دیں عوام کو بھکاری نہ بنائیں، آپ کو یہ ہی نہیں پتہ قیمتوں کو کنٹروک کرنے اور چینی کی فراہمی کے حوالے سے اختیار کس کا ہے؟ چینی کی فراہمی اور قیمتوں پر عمل درآمد کروانے کا اختیار پنجاب حکومت کا ہے، اگر شہریوں نے لائنوں میں لگ کر چینی لینی ہے تو وہ مفت چینی فراہم کرنے والوں کے گھر کے باہر کیوں نہ لائن لگالیں،سرکاری وکیل نے عدالت کوبتایا کہ سرکاری وکیل نے کہا کہ پرچون کی سطح پر چینی فراہم کی جارہی ہے، رمضان بازاروں میں لوگوں کی لائنیں نہیں لگ رہیں،انہیں کرسیوں پر بٹھا کر چینی فراہم کی جارہی ہے، عدالت نے ریمارکس دیئے کہ کیوں نہ اس معاملے پر لوکل کمیشن مقرر کردیا جائے؟ پھرلوکل کمیشن کی رپورٹ پر عدالت توہین عدالت کی کاrروائی کرے گی، آپ گیند ایک دوسرے کی کورٹ میں پھینک پر بری الذمہ نہیں ہوسکتے، اس کیس میں مسئلہ ریگولیشن کا ہے، پرچون کی سطح پر چینی 85روپے کلو نہیں مل رہی، حکومت پرچون کی سطح پر چینی کی فراہمی کو یقینی بنائے، عوام کو لائنوں میں لگا کر ان کی تذلیل کرنا آئین کی سنگین خلاف ورزی ہے۔

لاہور ہائیکورٹ

مزید :

صفحہ آخر -