رمضان بازاروں میں چینی کے سٹال پر عوام کارش برقرار، عدالتی حکم پر عملدرآمد نہ ہو سکا 

رمضان بازاروں میں چینی کے سٹال پر عوام کارش برقرار، عدالتی حکم پر عملدرآمد ...

  

لاہور(دیبا مرزا،تصاویر ندیم احمد)حکومت کی جانب سے لگائے گئے رمضان بازاروں میں عدالتی حکم کے مطابق چینی کے سٹال پر عوام کی قطاریں ختم کرنے کے آرڈر پر مکمل طور پر عملدرآمد نہ کروایا جا سکا،تفصیلات کے مطابق شہر بھر میں لگائے جانے والے رمضان بازاروں میں لگے چینی کے سٹالز پر خواتین اور مردوں کا رش لگا ہوا دکھائی دیا۔واضح رہے کہ عدالت نے حکم دیا تھا کہ رمضان بازاروں میں لگائے جانے والے چینی سٹالز پر خواتین اور مردوں کی لمبی قطاروں کو ختم کیا جائے۔جس کے بعد ضلعی انتظامیہ کی جانب سے رمضان بازاروں میں چینی کے قطاروں کے ساتھ ساتھ کرسیاں بھی فراہم کی گئیں لیکن یہ کرسیاں چینی لینے کے لیے آنے والوں کے لیے ناکافی ہیں جن پر خواتین تو بیٹھی دکھائی دیتی ہیں لیکن مردوں کی ابھی بھی لمبی قطاریں لگی ہیں۔اس حوالے سے روزنامہ پاکستان سے بات کرتے ہوئے شہریوں اشرف علی،اکرم،بابا حاجی عنایت بی بی و دیگر کا کہنا تھا کہ ہم کئی کئی گھنٹوں سے بیٹھ کر چینی کا انتظار کر رہے ہیں انہوں نے کہا کہ خواتین کو تو پھر بھی بیٹھنے کے لیے کرسیاں دیدی گئیں ہیں ہمیں تو پھر بھی قطاروں میں کھڑا ہونا پڑ رہا ہے انہوں نے کہا کہ رمضان بازاروں میں عوامی رش کے پیش نظر انتظامیہ کو اس بات کی طرف بھی دھیان دینا چاہیے تھا کہ چینی اور آٹے کے سٹالز پر عوامی رش زیادہ ہو گا اس کے مطابق انتظامات کئے جاتے۔اس حوالے سے ضلعی انتظامیہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ہم ایس او پیز پر عمل درآمد اور اس کے ساتھ عدالتی احکامات پر عمل در آمد کو یقینی بنانے کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں اور اس کے لئے بہترین انتظامات بھی کئے ہیں۔رمضان بازار میں شہریوں کی آمد عام دنوں سے ہٹ کر زیادہ ہوتی ہے جس سے قطاریں بنائیں گئی۔مگر خواتین اور مر د حضرات کے لئے کرسیوں کا پہلے بھی انتظام موجود تھا اور اب بھی زیادہ کر دیا گیا ہے تا کہ کوئی بھی کھڑا ہو کر یا قطار میں لگ کر سامان نا خریدے۔

رمضان بازار

مزید :

صفحہ آخر -