صحافی اقرارالحسن نے ذہنی امراض کے ماہر کوسٹنگ آپریشن کے دوران پریشان حال خواتین کو جنسی تعلقات کی پیشکش کرتے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا 

صحافی اقرارالحسن نے ذہنی امراض کے ماہر کوسٹنگ آپریشن کے دوران پریشان حال ...
صحافی اقرارالحسن نے ذہنی امراض کے ماہر کوسٹنگ آپریشن کے دوران پریشان حال خواتین کو جنسی تعلقات کی پیشکش کرتے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا 

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )خفیہ ریکارڈنگ کے ذریعے معاشرے میں موجود کالی بھیڑوں کو بے نقاب کرنے والے اقرار الحسن کی ٹیم سرعام نے شرافت کا لبادہ اوڑھ کر خواتین کو اپنی جنسی خواہشات کوسکون پہنچانے کا سامان سمجھنے والے ذہنی امراض کے ماہر ڈاکٹر کا بھانڈا پھوڑ دیاہے ۔

تفصیلات کے مطابق ٹیم سرعام کی جانب سے اسلام آباد کے ذہنی امراض کے ڈاکٹر کو خاتون سے ذو معنی الفاظ میں جسمانی تعلقات کا مطالبہ کرتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑ لیا ہے ،یہ تمام کارنانہ ایک سٹنگ آپریشن کے ذریعے انجام دیا گیا جس میں ایک خاتون کو کیمرہ پہنا کر ڈاکٹر کے پاس بھیجا گیا اور اس نے ذہنی مسائل کا شکار ہونے کی اداکاری کی ۔بات چیت کے دوران خاتون نے ڈاکٹر کی تمام ریکارڈنگ کر لی ، ڈاکٹر نے خاتون سے جنسی فائدہ دینے کیلئے کہا ، بعدازاں اقرار الحسن ویڈیو ریکارڈنگ لے کر ڈاکٹر کے پاس پہنچ گئے لیکن ذہنی امراض کے ماہر ڈاکٹر نے اپنا جرم ماننے سے انکار کر دیا بلکہ بہانے تلاش کرنے لگا ۔

ڈاکٹر نے کہا کہ یہ خاتون ان کے پاس چار مرتبہ آ چکی ہیں اور میرے خلاف بے بنیاد الزامات لگا رہی ہیں تاکہ میری ساکھ کو نقصان پہنچا سکیں ، میں نے اس خاتون کو کوئی جنسی تعلق کی پیشکش نہیں کی اورنہ ہی کوئی ایسی حرکت کرنے کی کوشش کی ہے ۔ ڈاکٹرنے یہ موقف اس کے باوجود بھی اپنایا جبکہ اس کی ساری گفتگو کیمرے میں ریکارڈ ہو چکی تھی جس میں وہ واضح طور پر خاتون کو جنسی خواہشا ت کی تکمیل کیلئے پیشکش کرتا دکھائی دیتاہے اور اسے اعصابی تناﺅ کو کم کرنے کا رنگ دیتا ہے ۔پروگرام کے دوران اقرار الحسن نے بتایاکہ متعدد نوجوان لڑکیوں اور طالباﺅں نے ان سے ذہنی امراض کے ڈاکٹر سے متعلق شکایت کی تھی جسے وہ عدالت میں پیش کریں گے ، متاثر ہ لڑکیوں کی جانب سے شکایات ملنے کے بعد ہی ہم نے یہ سٹنگ آپریشن کرنے کا فیصلہ کیا ۔

مزید :

قومی -