گھوڑے کو شاعری سنانے پر سعودی شوہر نے بیوی کو طلاق دے دی

گھوڑے کو شاعری سنانے پر سعودی شوہر نے بیوی کو طلاق دے دی
گھوڑے کو شاعری سنانے پر سعودی شوہر نے بیوی کو طلاق دے دی
کیپشن: horse

  

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) ایک سعودی شاعر کی بیوی نے بھی دل کے جذبات سے مجبور ہوکر ایک نظم لکھ دی لیکن بیچاریکی اس ادبی کوشش نے اسکا گھر ہی اجاڑ دیا اور شاعر نے مشتعل ہوکر اسے طلاق دے دی۔ اخبار ’’سدا‘‘ نے انکشاف کیا ہے کہ شاعر کی بیوی اپنے جروح نامی گھوڑے کو ایک نظم سناتی پکڑی گئی جس کا مضمون کچھ یوں ہے:

تیری اور چلی آئی ہوں اے جروح اپنے نسب کیا ہے خون میرے ارمانوں کا

اس شعر میں ’’جروح‘‘ خاتون کے تھروبریڈ (خالص نسل) گھوڑے کا نام ہے جبکہ اس نے اپنے خاوندکو اس پربے نسب یعنی غیر خالص نسل کا گھوڑا قرار دیا ہے۔ بدقسمتی سے خاتون کو جذبات کا اظہار کرتے ہوئے اس کے شاعر خاوند کی بہنوں نے دیکھ لیا اور فوراً اس کی شکایت لگادی۔ شاعر کو جب معلوم ہوا کہ اس کی بیوی نے اپنے خاص نسل کے گھوڑے کے سامنے اسے غیر خالص نسل کے گھوڑی سے تشبیہہ دی ہے تو اس نے فوراً اسے طلاق دے دی۔ شاعر کا کہنا ہے کہ اسے معلوم نہیں کہ اس کی بیوی نے اپنے ارمانوں کا اظہار اپنے گھوڑے کے پاس جاکر کیوں کیا ہے اور اخبار کے مطابق خاتون نے بھی تاحال اس کی وضاحت نہیں کی۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -