سی ڈی اے کے ڈپٹی ڈائریکٹر کی تقرری کے لئے ہائیکورٹ میں درخواست

سی ڈی اے کے ڈپٹی ڈائریکٹر کی تقرری کے لئے ہائیکورٹ میں درخواست

  

اسلام آباد (پ ر)کیپیٹل ڈیویلپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) کے ڈپٹی ڈائریکٹرمحمد اصغر زرداری نے ممبر ایڈمنسٹریشن سی ڈی اے اور ممبر انجینئرنگ سی ڈی اے کے علاوہ پانچ دیگر سی ڈی اے کے افسران کے خلاف ایک پٹیشن اسلام آباد ہائی کورٹ میں دائر کی ہے۔ پٹیشن میں استدعا کی گئی ہے کہ متعلقہ حکام کو ہدایت جاری کی جائے کہ محمد اصغر زرداری کی تقرری سنیارٹی لسٹ کے مطابق کی جائے۔ درخواست گزار نے اپنی پٹیشن میں کہا ہے کہ وہ سی ڈی اے میں 1996 ءسے ملازم ہے اور 2012ء میں اس کی ترقی ڈپٹی ڈائریکٹر کے عہدے پر ہوئی تھی۔ پٹیشن میں کہا گیا ہے کہ اس کی ترقی اس لئے ضروری ہے کیونکہ پٹیشنر سے جونیئر افراد کو گریڈ 19 میں ترقی دے کر ڈائریکٹر بنا دیا گیا ہے۔ انہوں نے اپنی پٹیشن میں کہا ہے کہ انہیں بھی سنیارٹی لسٹ کے مطابق ڈائریکٹر کے عہدے پر متعین کیا جائے اور سنیارٹی لسٹ کے قواعدوضوابط پر عمل کیا جائے۔ اس نے اپنی پٹیشن کے ساتھ بیان حلفی بھی منسلک کئے ہیں جن سے ثابت ہوتا ہے کہ اس کی حق تلفی ہوئی ہے۔ سی ڈی اے کے قوانین اور سپریم کورٹ کے ایک فیصلے کے مطابق سائل کو ترقی دی جانی چاہیے تھی جو کہ اس کا حق ہے۔ اس نے کہا ہے کہ سن کے ساتھ ہونے والا امتیازی اور انتقامی سلوک آئین کے آرٹیکل 38, 27, 25, 4 سے متصادم ہے اور سپریم کورٹ کے فیصلے کے بھی خلاف ہے۔ سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا تھا کہ افسران کی ترقی کے وقت ان کی سنیارٹی کا خیال رکھا جائے۔ سائل نے اپنی درخواست میں یہ استدعا بھی کی ہے کہ عدالت سی ڈی اے کو ہر وہ آرڈ منسوخ کرنے کی ہدایت کرے جن کے تحت سائل کی حق تلفی ہوئی ہے۔

مزید :

صفحہ آخر -