سعودی مفتی اعظم نے داعش اور القاعدہ کو اسلام کا پہلا دشمن قرار دے دیا

سعودی مفتی اعظم نے داعش اور القاعدہ کو اسلام کا پہلا دشمن قرار دے دیا

  

                             جدہ (اے این این)سعودی مفتی اعظم عبدالعزیز الشیخ نے داعش اور القاعدہ کواسلام کاپہلا دشمن قراردےتے ہوئے کہا ہے کہ اسلام میں شدت پسند افکاروخیالات اور دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں، دہشت گردی کاپہلا شکارمسلمان ہی بنتے ہیں ¾ اس کی مثالیں داعش اورالقاعدہ کے ہاتھوں مسلمانوں پرڈھائے جانے والے مظالم ہیں ¾ عوام حکمران قیادت پراعتماد کااظہار کرتے ہوئے دہشت گردی کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں ۔سعودی عرب کے مفتی اعظم الشیخ عبدالعزیز آل الشیخ نے اپنے فتوے میں شدت پسند تنظیم دولت اسلامی عراق و شام داعش کواسلام کی دشمن اول قراردیا ہے۔انھوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ حکمراں قیادت پراعتماد کااظہار کرتے ہوئے دہشت گردی کے خلاف حکومت کی پشت پرکھڑے ہوں اور ہرمشکل مرحلے میں حکومت کا ساتھ دیں۔ انہوں نے کہاکہ شدت پسندانہ افکاروخیالات اور دہشت گردی کی اسلام میں کوئی گنجائش نہیں۔ دہشت گردی کاپہلا شکارمسلمان ہی بنتے ہیں۔ اس کی مثالیں داعش اورالقاعدہ کے ہاتھوں مسلمانوں پرڈھائے جانے والے مظالم سے دیکھ سکتے ہیں۔انھوں نے دہشت گردوں کو خبردارکرتے ہوئے کہاکہ وہ اسلام کی تعلیمات کی صریحا خلاف ورزی کے مرتکب ہورہے ہیں۔ نبی آخرالزمان نے فرمایا ہے کہ آخری زمانے میں کچھ ایسے گروہ تواترکے ساتھ سامنے آئیں گے جونیکی کی بات کریں گے، قرآن پڑھیں گے مگرقرآن ان کے حلق سے نیچے نہیں اترے گا۔ آپ انھیں جہاں پائیں قتل کریں۔ جس کسی نے انھیں قتل کیاقیامت کے روز اللہ تعالی اسے جزا دیں گے۔ سعودی شیخ الاسلام کاکہنا ہے کہ داعش اورالقاعدہ جیسے گروپوں کا اسلام سے کوئی واسطہ نہیں اور نہ ہی یہ لوگ ہدایت پرہیں۔

 سعودی مفتی اعظم

مزید :

صفحہ آخر -