فیصلہ کر لیا۔۔۔ آزادی یا موت، نواز شریف سے استعفیٰ لئے بغیر نہیں جاﺅں گا، 2 دن میں فیصلہ ہونے والا ہے: عمران خان

فیصلہ کر لیا۔۔۔ آزادی یا موت، نواز شریف سے استعفیٰ لئے بغیر نہیں جاﺅں گا، 2 ...
فیصلہ کر لیا۔۔۔ آزادی یا موت، نواز شریف سے استعفیٰ لئے بغیر نہیں جاﺅں گا، 2 دن میں فیصلہ ہونے والا ہے: عمران خان

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ فوج کو سیاسی معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہئے، ملک کا 200 ڈالر واپس لاﺅں گا جس سے مہنگائی کم ہو گی، عمران خان بطور وزیراعظم امریکہ کا ہتھیار نہیں بنے گا، کارکنوں سے وعدہ کرتا ہوں کہ نواز شریف کے استعفے کے بغیر واپس نہیں جاﺅں گا، حکمران فیصلہ کر لیں عزت سے اقتدار چھوڑیں گے یا نہیں، کارکنوں پہنچو! پاکستان کی تقدیر کا فیصلہ 2 دن میں ہو جائے گا، نواز شریف ضمیروں کے سوداگر ہیں، بادشاہ سلامت سے نمٹنے کے بعد کراچی کا رخ کروں گا۔

عمران خان نے امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان کے بیان پر بھی افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ پاکستان میں غیرملکی طاقت کی مداخلت قبول نہیں، امریکہ کو کوئی حق نہیں کہ وہ نواز شریف کو جمہوری وزیراعظم کہے۔ آزادی مارچ کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ بات سامنے آ گئی ہے، نواز شریف کےساتھ کون کون کھڑا تھا آج ہمیں پتہ چل گیا ہے۔ امریکہ نے بیان دیا ہے کہ پاکستان میں جمہوری حکومت کو رہنا چاہئے، میں امریکیوں سے یہ کہنا چاہتا ہوں کہ میری زندگی کا بہت بڑا عرصہ مغرب میں گزرا ہے اور میں مغرب کی جمہوریت کو نواز شریف سے زیادہ جانتا ہوں۔ انہوں نے امریکی سفیر رچرڈ اولسن کو مخاطب کرتے ہوئے سوال پوچھا کہ کیا امریکی الیکشن میں دھاندلی ہو تو آپ مان لیں گے؟ کیا یورپ کے کسی ملک میں ایسا الیکشن ہو جس میں 60 سے 70 ہزار ووٹوں کی تصدیق ہی نہ ہو سکے تو کیا ایسے الیکشن مان لئے جائیں گے؟ انہوں نے کہا کہ ہم نے قوم بننا ہے ہمیں امریکہ کی ڈکٹیشن نہیں چاہئے، مسٹر اولسن! ہمیں امریکہ کے این او سی کی ضرورت نہیں، عمران خان بطور وزیراعظم امریکہ کا ہتھیار نہیں بنے گا۔ امریکہ پاکستان کے داخلی معاملات میں مداخلت نہ کرے، ہم نے امریکہ سے این او سی لے کر جمہوریت نہیں لانی، امریکہ سے کوئی لڑائی نہیں، اندرونی معاملات میں مداخلت نہ کرے، چاہتا ہوں فیصلے واشنگٹن میں نہیں، پاکستان میں ہوں۔ نواز شریف امریکہ کا غلام ہے کیونکہ ان کا پیسہ امریکی بینکوں میں پڑا ہے۔ آج اسمبلی اجلاس میں ایسا لگا ملکی مسائل میری وجہ سے ہیں، میرے خلاف تمام مجرم اکٹھے ہو گئے ہیں، ایک ایک کی وکٹ اڑاﺅں گا، موقع ملا تو ایسا پاکستان بناﺅں گا کہ دنیا بھر میں ہرے پاسپورٹ کی عزت ہو گی۔ عمران خان نے کہا کہ امریکی بیان کے بعد نواز شریف کا چہرہ کھل اٹھا اور وہ بہت خوش نظر آ رہے ہیں۔ نواز شریف سن لیں! امریکہ آپ کے ساتھ ہے اور میرے ساتھ اللہ ہے، ہفتے کی رات امپائر کی انگلی اٹھ جائے گی۔ انہوں کارکنوں کو کراچی کے علاقے تین تلوار پر اکٹھا ہونے کی ہدایت بھی کی اور کہا کہ آزادی کا جشن منانے کیلئے تیار ہو جائیں، جتنے لوگ یہاں پہنچ سکتے ہیں پہنچیں، پاکستان کی تقدیر کافیصلہ 2 دن میں ہو جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ وہ بادشاہ سلامت سے نمٹنے کے بعد کراچی کا رخ کریں گے اور تمام برادریوں کو اکٹھا کر کے امن قائم کریں گے۔

انہوں مولانا فضل الرحمان کو بھی آڑے ہاتھوں لیاں اور کہا کہ مولانا فضل الرحمان خیبرپختونخواہ سے ایک بھی سیٹ نہیں جیت سکے، فضل الرحمان سیاسی کے چھوٹے سے کھلاڑی ہیں جو ڈیزل کے پرمٹ پر ضمیر بیچ دیتے ہیں۔ فضل الرحمان! ڈیزل کے جتنے پرمٹ لینے ہیں لے لو، نئے پاکستان میں جیل ملے گی۔ انہوں نے محمود خان اچکزئی کو بھی نہ بخشا اور کہا کہ محمود خان اچکزئی کو غیرت مند پختون سمجھتا تھا لیکن انہوں نے بھائی کی گورنرشپ پر ضمیر بیچ دیا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ انہیں اطلاع ملی ہے کہ سیکرٹری داخلہ شاہد خان عوام کے ساتھ ٹکراﺅ کا سوچ رہا ہے، سیکرٹری داخلہ سن لیں! اگر پولیس اور کارکنوں کے درمیان تصادم ہوا تو چھوڑوں گا نہیں۔ ہم پرامن لوگ ہیں، سات دن سے احتجاج کر رہے ہیں لیکن ایک گملا بھی نہیں ٹوٹا۔ انہوں نے مذاکرات کا عمل معطل ہونے سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے رکاوٹیں کھڑی کر دی ہیں جس کے باعث مذاکرات معطل کئے ہیں۔

آئی جی اسلام آباد آفتاب چیمہ کو ہٹائے جانے پر گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ آئی جی کو مظاہرین پر کریک ڈاون سے انکار کرنے پر رخصت پر بھیج دیا گیا جبکہ اب میری اطلاعات کے مطابق نئے آئی جی خالد خٹک نے بھی مظاہرین پر تشدد سے انکار کر دیا ہے۔ا±ن کاکہناتھاکہ دھاندلی کو قانونی طریقے سے حل کرنے کی کوشش کی لیکن پارلیمنٹ اور سپریم کورٹ سمیت ہر فورم پر گئے ، 14ماہ سے کہہ رہے تھے کہ انصاف نہ ملاتوسڑکوں پر آجائیں گے ،تحریک انصاف نے صرف قوم سے کیاگیاوعدہ پوراکیااور احتجاج آئینی وقانونی حق ہے۔

قبل ازیں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان کا کہنا تھا کہ اگر کوئی خیبرپختونخواہ میں حلقے کھلوانے کا کہے تو کل ہی کھلوا دوں اور اگر دھاندلی ثابت ہو جائے تو اگلے روز ہی الیکشن کرا دوں گا۔ ایک سوال کے جواب میں تحریک انصاف کے چیئرمین کا کہنا تھا کہ فوج کو سیاسی معاملات میں مداخلت نہیں کرنی چاہئے اور اپنا کردار صرف اور صرف سیکیورٹی تک محدود رکھنا چاہئے۔

مزید :

قومی -Headlines -